Monday , December 11 2017
Home / دنیا / سینکڑوں تارکین وطن رکاوٹیں توڑتے ہوئے ہنگری میں داخل

سینکڑوں تارکین وطن رکاوٹیں توڑتے ہوئے ہنگری میں داخل

جرمنی اکیلا اس بحران سے نہیں نمٹ سکتا : مرکل، پیر کو مزید 11 ہزار تارکین وطن کا امکانی داخلہ
روزکے ۔ 8 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) سربیا سے مزید سینکڑوں تارکین وطن پولیس کی رکاوٹوں کو توڑتے ہوئے ہنگری میں داخل ہو گئے ہیں اور اب دارالحکومت بڈاپسٹ کی طرف جا رہے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق اس وقت پولیس کی نگرانی میں 300 تارکین وطن موٹر وے پر بڈاپسٹ کی جانب رواں دواں ہیں۔ ہنگری میں مشرقِ وسطی اور افریقہ سے ہزاروں کی تعداد میں تارکین وطن پہنچ رہے ہیں تاکہ یہاں سے جرمنی اور دیگر یورپی ممالک میں پناہ حاصل کر سکیں۔ پیر کو ہنگری کے وزیر دفاع نے تارکین وطن کو روکنے کے لیے سرحدوں پر تعمیرات میں مسائل کی وجہ سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ ہنگری نے اس سے پہلے تارکین وطن کو شمال کی جانب سے روکے رکھا تھا تاکہ یورپی قوانین کے تحت ان کا اندراج کیا جا سکے تاہم انھیں روکنے میں مشکلات کی وجہ سے اس نے جمعہ کو پابندیوں میں نرمی کر دی تھی اور جاریہ ہفتہ کے اختتام پر 20 ہزار تارکین آسٹریا کے راستے جرمنی پہنچنے میں کامیاب ہو گئے تھے۔ پیر کو ہنگری کے علاقے روزکے کے ایک کیمپ سے تارکین وطن کی نکلنے کی کوشش میں پولیس سے تصادم ہوا۔

اس دوران تارکین وطن نے پولیس اہلکاروں پر سنگباری کی جبکہ پولیس نے مرچوں کا سپرے استعمال کیا۔ دوسری جانب برطانیہ نے اگلے پانچ برس تک 20 ہزار تارکین وطن کو پناہ دینے کا اعلان کیا ہے اس سے پہلے جرمنی کی چانسلر انجیلا مرکل کا کہنا ہے کہ جرمنی میں آنے والے پناہ گزینوں کی ’حیران کن‘ تعداد آنے والے برسوں میں ملک میں پھیل کر ملک کو بدل کر رکھ دے گی۔ انھوں نے کہا کہ جرمنی پناہ لینے کے طریقہ کار میں تیزی لانے کے ساتھ ساتھ ملک میں زیادہ مکانات بھی تعمیر بھی کرے گا۔ جرمنی کی اتحادی حکومت نے تارکینِ وطن کے مسئلے سے نمٹنے کے لیے چھ ارب یورو پر مشتمل فنڈز جاری کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ انجیلامرکل نے یہ بھی کہا کہ جرمنی اکیلا اس بحران سے نہیں نمٹ سکتا۔ انھوں نے تمام یورپی ممالک پر زور دیا کہ وہ پناہ گزینوں کی مدد کریں۔ خیال ہے کہ گذشتہ ہفتہ اور اتوار کو کم از کم 20 ہزار تارکین وطن جرمنی آئے تھے اور توقع ہے کہ پیر کو مزید 11 ہزار لوگ ملک میں داخل ہوں گے۔ اس سے قبل فرانسیسی صدر نے اعلان کیا تھا کہ بحران سے نمٹنے کے لیے فرانس 24,000 پناہ گزینوں کو لینے کے لیے تیار ہے۔ انھوں نے کہا کہ وہ اور انجیلا مرکل چاہتے ہیں کہ یورپی یونین ایک ایسے منصوبے کی حمایت کرے جس کے تحت ہر ممبر ملک کے لازم ہو کہ وہ پناہ گزینوں کا منصفانہ حصہ لے۔ جرمن چانسلر انجیلا مرکل تارکینِ وطن کے لیے ملکی سرحدوں کو کھولنے کے فیصلے پر تنقید کی زد میں ہیں۔ اسپین کے اخبار ال پیئس نے سوموار کو رپورٹ کیا تھا کہ اسپین میں 120,000 پناہ گزین بسائے جائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT