Tuesday , September 25 2018
Home / شہر کی خبریں / سیول سروسیس :100 اقلیتی طلبا کو اسپانسرشپ

سیول سروسیس :100 اقلیتی طلبا کو اسپانسرشپ

حیدرآباد 25 جنوری ( پریس نوٹ ) آل انڈیا خدمات میں اقلیتوں کی انتہائی معمولی نمائندگی کو دیکھتے ہوئے حکومت کی جانب سے محکمہ اقلیتی بہبود کے ذریعہ ایک نئی اسکیم شروع کی گئی ہے جو 100 اقلیتی طلبا کو سیول سرویس امتحان کی کوچنگ کیلئے اسپانسر کرنے سے متعلق ہے ۔ یہ کوچنگ حیدرآباد میں ایک باوقار کوچنگ سنٹر میں دلائی جائیگی ۔ اس سلسلہ میں حکومت کی جانب سے جی او ایم ایس نمبر 1 اقلیتی بہبود محکمہ مورخہ 23 جنوری 2014 جاری کردیا گیا ہے ۔ یہ اسکیم مرکز برائے اقلیتی تعلیمی ترقی ( سی ای ڈی ایم ) کی جانب سے چلائی جائیگی ۔ جناب سید عمر جلیل سکریٹری اسپیشل اقلیتی بہبود کی جانب سے جاری کردہ ایک اعلامیہ کے بموجب اس اسکیم کے رہنما خطوط بھی جاری کردئے گئے ہیں ۔

ڈائرکٹر مرکز برائے اقلیتی تعلیمی ترقی ( سی ای ڈی ایم ) حیدرآباد میں تمام باوقار سیول سرویس کوچنگ مراکز سے کھلے ٹنڈرس طلب کرتے ہوئے کوچنگ کیلئے بولیاں طلب کرنی ہونگی ۔ جن اداروں میں بہترین کوچنگ دی جاتی ہو جہاں بہترین انفرا اسٹرکچر موجود ہو اور جہاں بہترین کوچنگ مواد ہو اور بہتر نتائج مل سکتے ہوں اور جو کم سے کم فیس عائد کریں ان کو کوچنگ کیلئے منتخب کیا جائیگا ۔ ڈائرکٹر سی ای ڈی ایم سے کہا گیا ہے کہ وہ کوالیفائنگ امتحان کی تاریخ کا تعین کرتے ہوئے اخبارات و میڈیا میں اس کی کافی تشہیر کا انتظام کریں۔ ٹاپ 100 طلبا کو کوالیفائنگ مارکس کی اساس پر اسپانسر کیا جائیگا ۔ اس کے علاوہ ڈگری سرٹیفیکٹ کے مارکس کی 25 فیصد ویٹیج دیا جائیگا اور اس میں اقل ترین نشانات کی حد 70 فیصد رکھی گئی ہے ۔

جن طلبا کو اسپانسر کیا جائیگا ان میں 33 فیصد ترجیحا خواتین ہونی چاہئیں۔ اس کا مرکز حیدرآباد ہی ہونا چاہئے اور اس کا بیاچ فبروری کے آخری ہفتے سے قبل شروع ہوجانا چاہئے ۔ کمشنر اقلیتی بہبود کو ڈائرکٹر سی ای ڈی ایم کی جانب سے اس اسکیم پر موثر عمل آوری کی نگرانی کرنی چاہئے ۔ کمشنر اقلیتی بہبود کو چاہئے کہ وہ ڈائرکٹر سی ای ڈی ایم کے حیدرآباد اکاؤنٹ میں 70 لاکھ روپئے فراہم کریں تاکہ اس کے اخراجات کی پابجائی ہوسکے ۔ یہ رقومات آندھرا پردیس اسٹیٹ مائناریٹی فینانس کارپوریشن اور اے پی ایس سی ( ایم ) ایف سی سے 50 لاکھ اور 20 لاکھ روپئے حاصل کرتے ہوئے جمع کی جانی چاہئے ۔ 100 اقلیتی طلبا میں اقلیتوں میں مختلف برادریوں کے تناسب کے اعتبار سے انتخاب ہونا چاہئے ۔ اس سلسلہ میں انٹرنس ٹسٹ کا جلد اعلان کیا جائیگا اور تمام اقلیتی طلبا کو اس میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا چاہئے ۔

TOPPOPULARRECENT