Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / سیکولر ذہن کے مسلم و غیر مسلم دانشوروں کا مشترکہ پلیٹ فارم وقت کی اہم ضرورت

سیکولر ذہن کے مسلم و غیر مسلم دانشوروں کا مشترکہ پلیٹ فارم وقت کی اہم ضرورت

قومی سالمیت اور جمہوری ڈھانچہ کی حفاظت پر زور ، اے آئی ایم ایس کے قائدین کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔24مارچ(سیاست نیوز) اترپردیش اسمبلی انتخابی نتائج کے بعد فرقہ پرست طاقتوں کی سرگرمیوں میںتیزی کے ساتھ اضافہ ہوا ہے ‘ فرقہ پرستوں کی نظر ان تمام ریاستوں پر ہے جہاں ہندواور مسلمان بھائی چارہ اور امن کے ساتھ زندگی گذار رہے ہیں۔ قومی سالمیت اور جمہوری ڈھانچہ کی حفاظت تمام ہندوستانیوں پر عائد ہوتی ہے ‘ بالخصوص یہ ذمہ داری ان شہریوں پر زیادہ ہے جو اکثریتی طبقے سے تعلق رکھنے کے ساتھ ساتھ سکیولر ذہن کے حامل ہیں۔ سکیولر ذہن کے غیرمسلم اور مسلم دانشوروں کا مشترکہ پلیٹ فارم وقت کی اہم ضرورت ہے جس کے ذریعہ عوام کے اندر امن ‘ بھائی چارہ اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو فروغ دیتے ہوئے فرقہ پرست طاقتوں کے ناپاک عزائم کو ناکام بنایاجاسکے۔ آج پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران کل ہند مسلم سنگم( اے آئی ایم ایس) کے قائدین نے ان خیالات کا اظہار کیا ۔ ریٹائرڈ آئی اے ایس جناب شفیق الزماں نے کہاکہ وقت کی اہم ضرورت ہے کہ فرقہ پرست طاقتوں کی بڑھتی اجارہ داری کو آپسی اتحاد کے ذریعہ ختم کیاجائے ۔ انہوں نے کہاکہ ریاستی سطح پر جس طرح کا ماحول بی جے پی او ردیگر فرقہ پرست طاقتوں کی جانب سے بنایا جارہا ہے اس سے صاف ظاہر ہے کہ اترپردیش کے بعد فرقہ پرست طاقتوں کا اگلا نشانہ ریاست تلنگانہ ہے جہاں کی گنگا جمنی تہذیب سارے ملک کے لئے ایک مثال بنی ہوئی ہے۔صدر اے آئی ایم ایس خالد رسول خان نے حکومت تلنگانہ سے مطالبہ کیاوہ فرقہ پرست طاقتو ں کے ساتھ سختی سے نمٹے۔انہوں نے مزیدکہاکہ اترپردیش ‘گوا او رمنی پور میں کامیابی کے بعد بی جے پی کے حوصلے کافی بلند ہیں ۔ میجر قادری نے کہاکہ ریاست تلنگانہ میں فرقہ پرست طاقتوں کے ساتھ ساتھ ہمیںان لوگوں سے بھی چوکنا رہنے کی ضرورت ہے جو چند روپیوں کے عوض مسلمانوں کے ووٹوں کی تقسیم کے ذریعہ ملک کی مختلف ریاستوں میںبی جے پی کو کامیابی سے ہمکنار کیاہے۔ مرزا یوسف بیگ اور جناب رئوف خان بھی اس موقع پر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT