Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / سی آئی ایس ایف دہشت گردی و تخریب کاری سے نمٹنے خود کو تیار کرے

سی آئی ایس ایف دہشت گردی و تخریب کاری سے نمٹنے خود کو تیار کرے

سائبر جرائم سے نمٹنا بڑا چیلنج ۔ اسسٹنٹ کمانڈنٹس و سب انسپکٹران کی پاسنگ آوٹ پریڈ سے راج ناتھ سنگھ کا خطاب
حیدرآباد 8 ستمبر( این ایس ایس ) مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے آج سی آئی ایس ایف کے عہدیداروں پر زور دیا کہ وہ دہشت گردی ‘ تخریب کاری وغیرہ کی نئی شکلوں سے پیدا ہونے والے چیلنجوں سے موثر انداز میں نمٹنے کیلئے خود کو تیار کریں۔ انہوں نے بدلتے ہوئے سکیوریٹی منظر نامہ خاص طور پر وی آئی پی سکیوریٹی ‘ ڈیزاسٹر مینجمنٹ ‘ سرکاری عمارتوں کی سکیوریٹی اور ہوا بازی سکیوریٹی کے معاملات میں سی آئی ایس ایف کا رول بہت بڑھ گیا ہے ۔ یہاں نیشنل انڈسٹریل سکیوریٹی اکیڈیمی میں اسسٹننٹ کمانڈنٹس کے 29 ویں بیاچ راست تقرر پانے والے اسسٹنٹ کمانڈنٹس کے 9 ویں بیاچ اور سب انسپکٹران کے 41 ویں بیاچ کی پاسنگ آوٹ پریڈ کی سلامی لینے کے بعد خطاب کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا کہ سی آئی ایس ایف کو جرائم کے نئے علاقوں جیسے سائبر کرائمس سے نمٹنے میں اپنی صلاحیتوں میں بہتری پیدا کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ دنیا آج ڈیجیٹل ہوتی جا رہی ہے ایسے میں سی آئی ایس ایف کو بھی اپنی صلاحیتوں میں بہتری پیدا کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے سی آئی ایس ایف کی عددی طاقت کو 1.36 لاکھ سے بڑھا کر دو لاکھ کرنے کیلئے اقدامات کا آغاز کردیا گیا ہے ۔ انہوں نے واضح کیا کہ قوم مخالف طاقتیں مسلسل ملک کی معیشت کو عدم استحکام کا شکار کرنے کی مسلسل کوششیں کر رہی ہیںجو جلدی ہی 7 ٹریلین تک پہونچنے کا امکان ہے ۔ فی الحال ملک کی معیشت 2 ٹریلین ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم مودی کی کوششوں کے نتیجہ میں یہ معیشت مزید استحکام حاصل کر رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ سی آئی ایس ایف میں خواتین کے تناسب کو بڑھایا جائے ۔ یہ تناسب ایک تہائی تک کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے مطلع کیا کہ سی آئی ایس ایف بائیں بازو کی تخریب کاری سے متاثرہ علاقوں میں تریقاتی سرگرمیوں میں بھی سرگرم ہے ۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ سکیوریٹی فورسیس کے بہتر استعمال میں خصوصی سکیوریٹی آڈٹ کی ضرورت ہے ۔ فی الحال سی آئی ایس ایف میں خواتین کا تناسب 5.04 فیصد ہے ۔         ( باقی سلسلہ صفحہ 8 پر )

TOPPOPULARRECENT