سی بی آئی تحقیقات سے حوصلہ پست ہوں گے

حیدرآباد ۔ 11 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز) : چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ انکاونٹر کی عدالتی یا سی بی آئی تحقیقات کرانے کے مسئلہ پر تذبذب کا شکار ہیں ۔ تحقیقات کرانے پر پولیس کے حوصلہ پست ہونے اور اکثریتی طبقہ ناراض ہونے کا خوف ہے نا کرانے کی صورت میں مسلمانوں کے اعتماد اور ووٹ سے محروم ہونے کے خدشات ہیں ۔ چیف منسٹر مسٹر کے چندر ش

حیدرآباد ۔ 11 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز) : چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ انکاونٹر کی عدالتی یا سی بی آئی تحقیقات کرانے کے مسئلہ پر تذبذب کا شکار ہیں ۔ تحقیقات کرانے پر پولیس کے حوصلہ پست ہونے اور اکثریتی طبقہ ناراض ہونے کا خوف ہے نا کرانے کی صورت میں مسلمانوں کے اعتماد اور ووٹ سے محروم ہونے کے خدشات ہیں ۔ چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے اپنے کیمپ آفس پر ریاستی ڈی جی پی انوراگ شرما ، سٹی کمشنر پولیس مہیندر ریڈی کے علاوہ پولیس کے دیگر اعلیٰ عہدیداروں کا اجلاس طلب کیا جس میں لا اینڈ آرڈر کے علاوہ اضلاع ورنگل اور نلگنڈہ کے سرحدی علاقوں میں پیس آئے انکاونٹر واقعات کا سنجیدگی سے جائزہ لیا گیا ۔ وقار احمد اور ان کے ساتھیوں کے انکاونٹر پر ریاست بھر میں ہونے والی تنقیدوں کا جائزہ لینے کے علاوہ مسلمانوں میں پائی جانے والی ناراضگی پر بھی غور کیا گیا ۔ بالخصوص وقار احمد اور ان کے ساتھیوں کے انکاونٹر کو انسانی حقوق کے جہد کاروں مسلمانوں اور علمائے مشائخین کی جانب سے فرضی انکاونٹر قرار دینے پر انہیں کس طرح مطمئن کیا جائے اس مسئلہ پر بھی غور کیا گیا ۔ وقار احمد اور ان کے ساتھی کے بعد نماز جنازہ اور جمعہ کی نماز کے بعد مغل پورہ میں پیدا ہونے والی کشیدگی کا بھی جائزہ لیا گیا ۔ ہر حال میں لا اینڈ آرڈر کو کنٹرول میں رکھنے کے لیے پولیس کو صبر و تحمل سے کام لینے کا مشورہ دیا ۔ مجلس متحدہ عمل اور دوسروں کی جانب سے انکاونٹر کی سی بی آئی یا عدالتی تحقیقات کرانے کے مطالبات پر بھی غور کیا گیا ۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں نے چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کو مشورہ دیا کہ وہ دباؤ میں ایسا کوئی فیصلہ نہ کریں جس سے پولیس کے حوصلے پست ہوجائے اور بی جے پی کو اس کا سیاسی فائدہ اٹھانے کا موقع فراہم ہو ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ اگر اعلیٰ سطحی تحقیقات نہیں کرائی گئی تو مسلمانوں میں بھی حکومت اور پولیس کے خلاف ناراضگی بڑھ جائے گی ۔ پولیس کے عہدیداروں نے چیف منسٹر کو درمیانی راستہ اختیار کرنے کا مشورہ دیا ۔ جس سے پولیس اور اکثریتی و اقلیتی طبقات کے جذبات مجروح نہ ہو ۔ اکثریتی رائے نے مجسٹریل تحقیقات کو ہی اہمیت دینے کا مشورہ دیا ۔ اگر اس سے اقلیتی طبقہ مطمئن نہ ہونے کی صورت میں برسر خدمات جج کے ذریعہ تحقیقات کرانے پر زور دیا ۔ آخر میں سی بی آئی تحقیقات سے انصاف کرنے کا مشورہ دیا ۔ ذرائع نے یہ بھی بتایا کہ سوریہ پیٹ کے انکاونٹر واقعہ میں پولیس کے غفلت برتنے پر بھی چیف منسٹر نے اپنی ناراضگی ظاہر کی جب سیمی کے دہشت گردوں کی نشاندہی ہونے کے باوجود انہیں پکڑنے کے لیے خصوصی ٹیمیں تشکیل نہ دینے اور تلاشی مہم میں شدت نہ پیدا کرنے کی وجہ دریافت کی۔ پولیس کی ناکامی کی وجہ سے ایک سب انسپکٹر دو کانسٹبل اور ایک ہوم گارڈ کی موت واقع ہوجانے کا دعویٰ کیا۔
کمشنر سٹی پولیس مسٹر مہیندر ریڈی نے بتایا کہ حیدرآباد میں سوائے ایک دو چھوٹے موٹے واقعات کے کوئی بڑا واقعہ پیش نہیں آیا ۔ پولیس کی جانب سے پرانے شہر کے علاوہ بس اسٹانڈ اور ریلوے اسٹیشن میں تلاشی مہم چلانے شک کے دائرے میں شامل رہنے والوں کو حراست میں لیتے ہوئے ان سے پوچھ تاچھ کرنے کی رپورٹ پیش کی ۔۔

TOPPOPULARRECENT