Friday , June 22 2018
Home / شہر کی خبریں / شادی مبارک اسکیم، دولہے کا آدھار کارڈ لازم نہیں

شادی مبارک اسکیم، دولہے کا آدھار کارڈ لازم نہیں

ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں کی نمائندگی پر حکومت کا اقدام

ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں کی نمائندگی پر حکومت کا اقدام

حیدرآباد ۔ 12 جنوری (سیاست نیوز) حکومت تلنگانہ نے غریب مسلم لڑکیوں کی شادیوں کیلئے جو شادی مبارک اسکیم شروع کی ہے، اس سے اقلیتوں میں کافی جوش و خروش پایا جاتا ہے اور امید ہیکہ اس اسکیم سے ہزاروں غریب لڑکیوں کی شادی میں مدد ملے گی۔ چیف منسٹر مسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے اس ضمن میں احکامات جاری کئے تھے جس کے تحت غریب مسلم والدین کو ان کی لڑکیوں کی شادی کیلئے فی کس 51 ہزار روپئے کی فراہمی شروع ہوچکی ہے۔ اس اسکیم سے استفادہ کیلئے لڑکے اور لڑکی سے کئی دستاویزات طلب کئے گئے تھے جن میں آدھار کارڈ سے لے کر انکم سرٹیفکیٹ شامل ہیں۔ ایک اہم شرط یہ تھی کہ جو لڑکی والے حکومت سے 51 ہزار کی امداد حاصل کرنے کے خواہاں ہیں، انہیں لڑکے یعنی دولہے کا آدھار کارڈ پیش کرنا لازمی تھا لیکن ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں کی نمائندگی پر ڈپٹی چیف منسٹر محمود علی نے چیف منسٹر کی توجہ اس جانب دلائی، جس پر انہوں نے عہدیداروں کو دولہے کے آدھار کی شرط حذف کرادینے کی ہدایت دی چنانچہ اب دولہے کے آدھار کارڈ کی ضرورت نہیں ہے تاہم دولہے کا کوئی ایک شناختی ثبوت مثلاً ووٹر آئی ڈی یا راشن کارڈ کی نقل پیش کیا جاسکتا ہے۔ سیاست ہیلپ لائن کے سید خالد محی الدین اسد نے بتایا کہ بے شمار والدین سیاست سے رجوع ہورہے ہیں اور ان کے دستاویزات کا سیاست ہیلپ لائن آن لائن ادخال کررہا ہے۔ یہ خدمت بھی آدھار کارڈ کی فراہمی اور اسکالر شپس کی طرح مفت انجام دی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت ایس ایس سی سرٹیفکیٹ اور برتھ سرٹیفکیٹس کا لزوم بھی ختم کرتی ہے تو بہتر رہے گا۔

TOPPOPULARRECENT