Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / شادی مبارک اسکیم کے جی او میں ترمیم کا مطالبہ

شادی مبارک اسکیم کے جی او میں ترمیم کا مطالبہ

محکمہ اقلیتی فینانس کارپوریشن کو بااختیار بنایا جائے ، عام آدمی پارٹی
حیدرآباد ۔ 20 ۔ جولائی : ( پریس نوٹ) : عام آدمی پارٹی تلنگانہ نے شادی مبارک اسکیم سے متعلق جی او ایم ایس نمبر 25 میں ترمیمات کا مطالبہ کیا ۔ معاون کنوینر عام آدمی پارٹی تلنگانہ پروفیسر پی ایل ویشویشور راؤ و نمرتا جیسوال میڈیا کوآرڈینٹر عاپ نے ریاستی حکومت سے اس بات کا مطالبہ کرتے ہوئے بتایا کہ اس اسکیم میں تحصیلدار اور متعلقہ رکن اسمبلی کو شامل کیے جانے کے سبب اسکیم کی مستحق افراد تک رسائی میں مشکلات پیش آرہی ہیں ۔ شادی مبارک اسکیم کو اقلیتی طبقات سے تعلق رکھنے والی غیر شادی شدہ لڑکیوں کی شادی کے لیے متعارف کیا گیا جب کہ اس اسکیم کے تحت ہر لڑکی کو 51 ہزار روپئے رقم حوالے کی جائے گی ۔ عام آدمی پارٹی قائدین نے بتایا کہ شادی مبارک اسکیم درخواستوں کی ایگزیکٹیو ڈائرکٹر تلنگانہ اسٹیٹ اقلیتی فینانس کارپوریشن محکمہ ضلع اقلیتی بہبود کی جانب سے یکسوئی کی بجائے تحصیلدار کے علاوہ مقامی رکن اسمبلی کی جانب سے درخواست کی منظوری کے احکامات کے سبب رقم کے حصول میں تاخیر پیش آرہی ہے ۔ اس اسکیم میں کئی بے قاعدگیوں کے علاوہ تاحال پندرہ ہزار درخواستیں زیر التواء ہیں ۔ عام آدمی پارٹی نے شادی مبارک اسکیم کی درخواستوں کو تلنگانہ اسٹیٹ ماینارٹیز فینانس کارپوریشن اور ڈسٹرکٹ مینارٹیز ویلفیر ڈپارٹمنٹ کے ذریعہ ضلع سطح پر یکسوئی کا مطالبہ کیا ہے ۔ عام آدمی پارٹی قائدین نے اسکیم کے درمیانی آدمی کے عمل دخل کو ختم کرنے کا بھی ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ایک سال کی تکمیل کے باوجود بھی لوگ اس اسکیم سے استفادہ نہیں کرپارہے ہیں جب کہ انہیں شادی کی تکمیل کے لیے بڑے پیمانے پر قرض حاصل کرنا پڑرہا ہے ۔ عام آدمی پارٹی قائدین نے مطالبہ کیا کہ رقم کو راست طور پر لڑکی کی والدہ کے اکاونٹ میں منتقل کیا جائے جیسا کہ پہلے یہ طریقہ مروج تھا ۔۔

TOPPOPULARRECENT