شام میں 22 ملائیشیائی بشمول خاتون ڈاکٹر داعش کے ساتھ

کوالالمپور۔ 5؍اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ ایک 26 سالہ خاتون ڈاکٹر ان 22 ملائیشیائی شہریوں میں شامل ہے جو مبینہ طور پر شام میں دہشت گرد گروپ دولت اسلامیہ کی سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ پولیس نے آج اس خبر کی توثیق کی۔ خاتون ڈاکٹر ایک ملائیشیائی شہری سے شادی کرچکی ہے جو دولت اسلامیہ گروپ میں شامل ہے۔ پولیس کے انسداد دہشت گردی عہدیدار ایوب خان می

کوالالمپور۔ 5؍اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ ایک 26 سالہ خاتون ڈاکٹر ان 22 ملائیشیائی شہریوں میں شامل ہے جو مبینہ طور پر شام میں دہشت گرد گروپ دولت اسلامیہ کی سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ پولیس نے آج اس خبر کی توثیق کی۔ خاتون ڈاکٹر ایک ملائیشیائی شہری سے شادی کرچکی ہے جو دولت اسلامیہ گروپ میں شامل ہے۔ پولیس کے انسداد دہشت گردی عہدیدار ایوب خان میدین پچے نے کہا کہ ان تمام کی شناخت کی توثیق حاصل کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ خاتون کے خاندان کے بارے میں بھی مزید معلومات کے حصول کی کوشش جاری ہے۔ اس بات کی تحقیق کی جارہی ہے کہ کیا خاتون ڈاکٹر پر شام جانے کے لئے اثر و رسوخ استعمال کیا گیا تھا؟ میدین پچے نے کہا کہ سرکاری خبر رساں ادارہ برناما کے بموجب خاتون ڈاکٹر سماجی میڈیا پر سرگرم تھی اور ملائیشیائی خواتین کو ایک فیس بک اکاؤنٹ کے ذریعہ بھرتی کرنے کی کوشش کررہی تھی

، تاہم انھوں نے کہا کہ خواتین کو اس بات کا احساس نہیں تھا کہ خواتین اور لڑکیوں کا بے رحم عسکریت پسند گروپس کی جانب سے استحصال کیا جارہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے بموجب دولت اسلامیہ کے عسکریت پسند خواتین اور لڑکیوں کا اغواء کرکے انھیں زبردستی جنسی غلام بنالیتے ہیں۔ ایوب خان نے کہا کہ ایک جوڑا 23 سالہ مرد اور 29 سالہ خاتون جو علی الترتیب ملائیشیاء کی ریاستوں سیلانگور اور تیرنگانو کے متوطن تھے، ان 22 افراد میں شامل ہیں جو شام میں موجود ہیں۔ ایک ملائیشیائی مرد جس کی عمر 35 سال ہے، اپنی 46 سالہ بیوی کے ساتھ جو ایک غیر ملکی شہری ہے، شام منتقل ہوچکا ہے۔ انسداد دہشت گردی ڈیویژن نے جاریہ سال 28 اپریل کو ایک خصوصی کارروائی کا آغاز کیا ہے۔ 22 افراد کو شبہ میں گرفتار کیا گیا تھا کہ وہ عسکریت پسند سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ دولت اسلامیہ کے عسکریت پسند عراق اور شام کے وسیع علاقوں پر قبضہ کرچکے ہیں اور اپنے قائد ابوبکر البغدادی کو اس اسلامی ریاست کا خلیفہ قرار دے چکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT