Tuesday , January 23 2018
Home / دنیا / شام : کیمیائی ہتھیاروں کے دوبارہ استعمال کی معلنہ انتخابات کے پیش نظر اہمیت

شام : کیمیائی ہتھیاروں کے دوبارہ استعمال کی معلنہ انتخابات کے پیش نظر اہمیت

بیروت/واشنگٹن 22 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام )شام کے کیمیائی ہتھیاروں کا ذخیرہ تلف کرنے کے بین الاقوامی معاہدہ کے باوجود جاریہ ماہ کے اوائل میں کیمیائی ہتھیاروں کے تازہ استعمال کے دعوے ابھر آئے ہیں ۔ تازہ ترین ثبوت کا حوالہ امریکی اور فرانسیسی عہدیداروں نے دیا ہے جبکہ شام میں 3 جون کو صدارتی انتخابات کے انعقاد کا اعلان ہوچکا ہے ۔ اقوام متح

بیروت/واشنگٹن 22 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام )شام کے کیمیائی ہتھیاروں کا ذخیرہ تلف کرنے کے بین الاقوامی معاہدہ کے باوجود جاریہ ماہ کے اوائل میں کیمیائی ہتھیاروں کے تازہ استعمال کے دعوے ابھر آئے ہیں ۔ تازہ ترین ثبوت کا حوالہ امریکی اور فرانسیسی عہدیداروں نے دیا ہے جبکہ شام میں 3 جون کو صدارتی انتخابات کے انعقاد کا اعلان ہوچکا ہے ۔ اقوام متحدہ وار شامی اپوزیشن نے ان انتخابات کو ’’ڈھونگ ‘‘قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ تین سالہ خانہ جنگی کے اختتام کی کوششوں کے پیش نظر یہ اقدام صرف آنسو پونچھنے کے مترادف ہے ۔ وائیٹ ہاوز کے ترجمان جے کارنی نے کہا کہ زہریلے صنعتی کمیکل ہتھیاروں کے استعمال کے ہمارے پاس ثبوت موجود ہیں۔ غالباً یہ کلورین تھی جو جاریہ ماہ شام میں استعمال کی گئی اپوزیشن کے غلبہ والے دیہات کفرزیتا میں کلورین گیس مخالفین پر چھوڑی گئی۔ انہوں نے کہا کہ اس بات کا جائزہ لیا جارہا ہے کہ کیا اس کی ذمہ دار بشارالاسد حکومت تھی۔

امریکہ کے اس انکشاف کے بعد صدر فرینکوئی اولانگ نے اعلان کیا کہ کہ ان کے ملک کو اطلاع مل چکی ہے لیکن ثبوت دستیاب نہیں ہوا کہ بشارالاسد حکومت اب بھی کیمیائی ہتھیار استعمال کررہی ہے۔مبینہ کلورین گیس حملے کے بارے میں متضاد دعوے کئے جارہے ہیں۔ حکومت اور اپوزیشن ایک دوسرے پر الزام تراشی کررہے ہیں۔ انسانی حقوق کے علمبردار کارکنوں نے بھی اطلاع دی ہے کہ کلورین گیس کے مزید حملے کئے گئے ۔ ایسا ایک حملہ حال ہی میں کل شمال مغربی صوبہ ادلیب میں کیا گیا ۔ انسداد کیمیائی اسلحہ تنظیم اور دیگر ماہرین کئی ماہ شام کے کیمیائی ہتھیاروں کا ذخیرہ منتقل کرنے میں صرف کرچکے ہیں جبکہ گذشتہ اگست میں دمشق کے قریب مہلک کیمیائی ہتھیاروں کے حملہ میں سینکڑوں افراد ہلاک کئے گئے تھے ۔

شام کی حکومت سے بین الاقوامی معاہدہ کیاگیا تھا کہ وہ اندرون چھ ماہ اپنے کیمیائی ہتھیاروں کا ذخیرہ تلف کردے گا اور ماہرین کو یہ ذخیرہ شام سے منتقل کرنے کی ذمہ داری دی گئی تھی ۔ مغربی ممالک نے بشارالاسد حکومت پر تازہ ترین کیمیائی حملوں کا الزام عائد کیا ہے اور امریکہ نے دھمکی دی ہے کہ اگر حکومت یہ سلسلہ ترک نہ کریں تو اس پر حملہ بھی کیا جاسکتا ہے ۔ گذشتہ ہفتہ او پی سی ڈبلیو نے کہا تھا کہ کیمیائی ہتھیاروں کے ذخیرہ کا 65 فیصد شام سے منتقل کیا جاچکا ہے ۔ حالانکہ کلورین ایک زہریلی گیاس ہے لیکن اسے بڑے پیمانے تجارتی اور گھریلو مقاصد کیلئے استعمال کیا جاتا ہے اس لئے شام کو اسے اپنے کیمیائی ہتھیاروں کے ذخیرہ میںشامل کرنے کی ضرورت نہیں تھی۔
شام : کیمیائی ہتھیاروں کے دوبارہ استعمال کی معلنہ انتخابات کے پیش نظر اہمیت
جاریہ ماہ شام میں زہریلے کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے اشارے ملنے کا امریکی الزام

TOPPOPULARRECENT