Tuesday , December 11 2018

شخصی حاضری سے استثنیٰ کیلئے لکھوی کی درخواست کا ادخال

لاہور ۔ 5 مئی (سیاست ڈاٹ کام) لشکرطیبہ کے آپریشن کمانڈر ذکی الرحمن لکھوی جو 2008ء میں ممبئی حملوں کا اصل سازشی ہے، نے آج پاکستان کی انسداد دہشت گردی عدالت سے درخواست کی ہیکہ وہ عدالت میں شخصی حاضری سے استثنیٰ دے کیونکہ اسے سیکوریٹی مسائل کا سامنا ہے اور جان کا خطرہ ہے۔ لکھوی کے وکیل راجہ رضوان عباسی نے کل اسلام آباد میں واقع عدالت میں ی

لاہور ۔ 5 مئی (سیاست ڈاٹ کام) لشکرطیبہ کے آپریشن کمانڈر ذکی الرحمن لکھوی جو 2008ء میں ممبئی حملوں کا اصل سازشی ہے، نے آج پاکستان کی انسداد دہشت گردی عدالت سے درخواست کی ہیکہ وہ عدالت میں شخصی حاضری سے استثنیٰ دے کیونکہ اسے سیکوریٹی مسائل کا سامنا ہے اور جان کا خطرہ ہے۔ لکھوی کے وکیل راجہ رضوان عباسی نے کل اسلام آباد میں واقع عدالت میں یہ درخواست داخل کی اور کہا کہ ان کے موکل کو چونکہ جان کا خطرہ لاحق ہے لہٰذا سیکوریٹی کی بنیاد پر 26/11 حملوں کی سماعت کیلئے اس کی شخصی طور پر حاضری کو وقار کا مسئلہ نہ بنایا جائے۔ 26/11 حملوں کی سماعت جب جب ہوئی تب تب لکھوی اور اس کے چھ ساتھیوں نے عدالت میں بلاناغہ حاضری دی۔ اس کی وجہ یہ ہیکہ وہ سماعتیں انتہائی سیکوریٹی والی راولپنڈی کی اڈیالا جیل میں ہوئی تھیں۔ تاہم اب صورتحال بالکل مختلف ہے۔ لکھوی اڈیالا جیل میں نہیں ہے اور رہائی کے بعد اسے سماعت کیلئے ازخود اپنے ذرائع سے عدالت میں حاضر ہونا پڑے گا اور ایسا ممکن ہیکہ عدالت آتے ہوئے یا عدالت سے واپس جاتے ہوئے اس کا قتل کردیا جائے۔ لہٰذا عدالت سے خواہش کی جاتی ہیکہ میرے موکل کو شخصی حاضری سے استثنیٰ دیا جائے۔ گذشتہ سماعت 30 اپریل کو کی گئی تھی۔ تاہم عدالت کو یہ اطلاع دی گئی تھی کہ اسلام آباد ہائیکورٹ سے کیس کا ریکارڈ حاصل نہیں کیا گیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT