Friday , January 19 2018
Home / Top Stories / شردپوار یو پی اے اور تیسرے محاذ دونوں کشتیوں میں سوار

شردپوار یو پی اے اور تیسرے محاذ دونوں کشتیوں میں سوار

ممبئی 21 اپریل (سیاست ڈاٹ کام)این سی پی کے صدر شردھ پوار نے آج کہا کہ وہ تیسرے محاذ کی مرکز میں حکومت تشکیل دینے کے مخالف نہیں ہے بشرطیکہ برسر اقتدار محاذ اکثریت حاصل نہ کرسکے۔ انہوں نے کہا کہ فی الحال تیسرے محاذ کا کوئی وجود نہیں ہے لیکن انتخابات کے بعد اگر ایسی صورتحال پیدا ہوجائے اور کوئی پائیدار متبادل حکومت ابھر کر آسکے تو وہ اس ک

ممبئی 21 اپریل (سیاست ڈاٹ کام)این سی پی کے صدر شردھ پوار نے آج کہا کہ وہ تیسرے محاذ کی مرکز میں حکومت تشکیل دینے کے مخالف نہیں ہے بشرطیکہ برسر اقتدار محاذ اکثریت حاصل نہ کرسکے۔ انہوں نے کہا کہ فی الحال تیسرے محاذ کا کوئی وجود نہیں ہے لیکن انتخابات کے بعد اگر ایسی صورتحال پیدا ہوجائے اور کوئی پائیدار متبادل حکومت ابھر کر آسکے تو وہ اس کی مخالفت نہیں کرسکیں گے ۔ اس سوال پر کہ کیا اس بار انہیں کسی متبادل کے ابھرنے کی توقع ہے انہوں نے کہا کہ فی الحال نہیں۔ میں آپ سے صاف کہہ دینا چاہتا ہوں کہ فی الحال تیسرے محاذ کا کوئی وجود نہیں ہے لیکن انہوں نے دیگر ریاستوں کا دورہ نہیں کیا ہے اور 24 اپریل کے بعد ہی ایسا کرسکیں گے ۔ جبکہ مہاراشٹرا میں 24 اپریل کو رائے دہی مقرر ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسی وجہ سے وہ مناسب تجزیہ نہیں کرسکتے ۔ انہیں دیگر سیاسی پارٹیوں کے قائدین سے تبادلہ خیال کا بھی موقع نہیں ملا کیونکہ ان کی اپنی ذمہ داریاں ہیں۔ وہ خبر رساں ادارہ کو انٹرویو دے رہے تھے تاہم انہوں نے کہا کہ تیسرے محاذ کے بارے میں فیصلہ کانگریس کے ساتھ ضروری مشاورت کے بعد ہی کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ یقینا تین قسم کے فیصلے کئے جائیں گے ۔ ایک تو انفرادی فیصلہ ہوگا ،دوسرا قومی سطح کی صورتحال پر مبنی فیصلہ اور تیسرا کانگریس کے ساتھ تبادلہ خیال کے بعد کیا جانے والا اجتماعی فیصلہ ۔ انہوں نے کہا کہ تیسرے محاذ کے قیام کی کوشش بھی اجتماعی ہوگی۔ 74 سالہ این سی پی کے صدر نے کہا کہ وہ طویل مدت سے وزیر اعظم بننے کی خواہش رکھتے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں کہ کیا ایسی کوشش انتخابات سے پہلے دوبارہ کی جائے گی۔ شردھ پوار نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ ابھی رائے دہی کیلئے اور رائے شماری کیلئے کافی وقت ہے۔ 24 اپریل سے 16 مئی تک وقت موجود ہے ۔ اس سوال پر کہ کیا انہوں نے اس مسئلہ پر کانگریس کے ساتھ بات چیت کی ہے شردھ پوار نے کہا کہ ہنوز کوئی بات چیت نہیں ہوئی اس کا انحصار صورتحال پر ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ انہیں یقین ہے کہ دیگر پارٹیوں سے بھی بہترین تائید حاصل ہوگی۔ اسی صورت میں ہی وہ کوئی کوشش کریں گے۔نریندر مودی کے بارے میں ذرائع ابلاغ کی مبالغہ آرائی کا لحاظ کئے بغیر صدر این سی پی نے کہا کہ یو پی اے کی تائید کرنے والوں کی تعداد میں انتخابات کے بعد اضافہ ہوجائے گا ۔ انہوں نے یقین ظاہر کیا کہ اگر یو پی اے قطعی اکثریت حاصل کرنے سے قاصر رہے تو اسے حلیف پارٹیوں کی کمی نہیں ہوگی۔ بی جے پی سادہ اکثریت (272 نشستیں )کبھی حاصل نہیںکرسکے گی۔ انہوں نے کہا کہ وہ یہ نہیںکہہ رہے ہیں کہ یو پی اے کو واضح اکثریت حاصل ہوگی تاہم کانگریس کو اتنے حلیف حاصل ہوجائیں گے کہ وہ مرکز میںیوپی اے حکومت قائم کرسکے گی۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر مغربی بنگال ممتا بنرجی ،صدر بی جے ڈی نوین پٹنائک اور صدر سماجوادی پارٹی ملائم سنگھ کبھی بی جے پی کی تائید نہیں کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT