Sunday , November 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / شرپسندوں کے خلاف مقدمہ درج اور سخت کارروائی کاتیقن

شرپسندوں کے خلاف مقدمہ درج اور سخت کارروائی کاتیقن

… … : نندی پیٹ منڈل کالج پرنسپل واقعہ : … …

نظام آباد میں کُل جماعتی قائدین و طلبہ کی ضلع کلکٹر اور کمشنر کو یادداشت پیش
نظام آباد:16؍ اگسٹ۔ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)یوم آزادی کے موقع پر بھگوا تنظیموں سے وابستہ آرایس ایس ، بی جے پی سے تعلق رکھنے والے کارکن مسلم پرنسپل کی جانب سے پرچم کشائی کو برداشت نہ کرتے ہوئے جوتے پہن کر پرچم کشائی کرنے پر اعتراض کرتے ہوئے ان کے ساتھ نازیبا سلوک کرتے ہوئے زبردستی کالج سے گھسیٹ کر لے گئے اور سڑک پر احتجاج کرتے ہوئے نعرہ بازی کرنا شروع کی ۔ یہ واقعہ ضلع نظام آباد کے نندی پیٹ منڈل کے آئیلا پور گورنمنٹ جونیئر کالج میں پیش آیا۔ تفصیلات کے بموجب 71ویں یوم آزادی کے موقع پر ہر سرکاری دفتر پر پرچم کشائی انجام دی گئی۔ اسی طرح گورنمنٹ جونیئر کالج آئیلا پور میں پرچم کشائی انجام دی گئی۔ پرنسپل محمد یقین الدین پرچم کشائی کے موقع پر جوتے پہنے ہوئے تھے اور پرچم کشائی کو انجام دی اور اس تقریب میں دیہات کے سرپنچ سدرشن، کوآپریٹیو کے چیرمین لکشمی نارائنا اور ٹی آرایس کے قائدین بھی موجود تھے۔ اس موقع پر اے بی وی پی ، بی جے پی ، بجرنگ دل کے کارکنوں نے پرچم کشائی انجام دینے والے پرنسپل یقین الدین کے ساتھ جھگڑنا شروع کیا اور جوتے پہن کر پرچم کشائی انجام دینے پر اعتراض کرتے ہوئے بڑے پیمانے پر بھگوا تنظیموں کے کارکن جمع ہوگئے اور انہیں زبردستی یہاں سے ڈھکیل کر کالج سے باہر لایا اور سڑک پر بیٹھ کر احتجاج کرنا شروع کیا اور بھارت ماتا کی جئے ، پرنسپل ڈائون ڈائون کرتے ہوئے نعرہ بازی شروع کی ۔ یہاں پر موجود سرپنچ ، کوآپریٹیو سوسائٹی کے چیرمین مداخلت کرتے ہوئے مسئلہ کو حل کرنے کی کوشش کی لیکن بھگوا تنظیموں کے کارکن من مانی کرتے ہوئے پرنسپل کے ساتھ نازیبا حرکت کرنا شروع کیا ۔ تقریباًآدھے گھنٹے تک پرنسپل کے خلاف نعرہ بازی کرتے ہوئے پرنسپل کو معطل کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے سوشل میڈیا پر اسے وائیرل کردیا ۔ واضح رہے کہ پرچم کشائی کے موقع پر جوتے اتارنا کسی بھی قانون میں درج نہیں ہے جبکہ وزیر اعظم نریندر مودی لال قلعہ پر ، بی جے پی صدر امیت شاہ بی جے پی پارٹی آفس پر اور آرایس ایس کے چیف آرایس ایس آفس میں جوتے پہن کر پرچم کو لہرایا اور یہ سارے تصاویر سوشل میڈیا پر وائیرل ہوتے ہی ماحول گرم ہوگیا اور سوشل میڈیا پر دن بھر بحث چلتی رہی۔ اس واقعہ کے بعد شہر نظام آباد سے وابستہ کل جماعتی قائدین جماعت اسلامی ، کانگریسی اقلیتی سیل ، سی پی آئی ، سی پی ایم ، مجلس بچائو تحریک ، جمعیت العلما ء اور دیگر جماعتوں سے وابستہ کارکنوں نے الگ الگ انداز میں احتجاج کرتے ہوئے کمشنر اور ضلع کلکٹر کو یادداشت پیش کی ۔ نوجوانوں کی ایک بڑی ریالی نہروپارک سے نکل کر کلکٹریٹ پہنچی اور ضلع کلکٹر کو یادداشت پیش کرتے ہوئے احتجاج کیا تو پولیس نے صدر ضلع مجلس بچائو تحریک عبدالقادر ساجد، ثناء اللہ ، اظہر الدین کو تحویل میں لیکر Iٹائون پولیس اسٹیشن منتقل کیا اور Iٹائون میں بٹھا کر رکھا جس پر مجلس بچائو تحریک کے صدر ساجد نے پولیس عہدیداروں سے بات چیت کی۔پولیس کمشنر نے اس خصوص میں سنجیدہ اقدامات کرنے کا ارادہ ظاہر کیا ۔ بھگوا تنظیموں سے وابستہ کارکن مسلمان پرنسپل کی پرچم کشائی کو برداشت نہ کرتے ہوئے ان کے ساتھ ناشائستہ سلوک پر مختلف جماعتوں کی جانب سے مخالفت کرتے ہوئے آج پریس کلب میں پریس کانفرنس سے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ بھگوا تنظیموں سے وابستہ کارکنوں کی زیادتیوں میں دن بہ دن اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔ جوتے پہن کر پرچم کشائی کرنا پرچم کی ہتک نہیں ہے قومی پرچم کا ہر فرد احترام کرتا ہے جبکہ ہر مقام پر جوتے پہن کر پرچم کشائی کی گئی لیکن نندی پیٹ کے آئیلا پور میں مسلمان پرنسپل کی جانب سے کیا گیا تو بھگوا تنظیموں کو برداشت نہ کرتے ہوئے پرنسپل کے خلاف ناشاستہ حرکت کر ڈالی لہذا اس واقعہ کی مکمل تحقیقات کرتے ہوئے اس میں ملوث تمام افراد کو گرفتار کرنے کا بھی مطالبہ کیا ۔ پرنسپل یقین الدین بھی ان کے ساتھ کئے گئے حرکت پر نندی پیٹ پولیس اسٹیشن میں مقدمہ درج کروایا جس پر نندی پیٹ پولیس نے اس میں ملوث افراد پر مقدمہ درج کیا ۔ یقین الدین گورنمنٹ جونیئر کالج کے پرنسپل اسوسی ایشن کے ریاستی قائد کے علاوہ آئیٹا ٹیچر تنظیموں سے وابستہ ہے اور حال ہی میں ان کا تبادلہ کاماریڈی جونیئر کالج سے ہوا تھا اور کاماریڈی جونیئر کالج میں یقین الدین تلگو میڈیم ، اُردو میڈیم متحد جونیئر کالج کے پرنسپل تھے اور یہ طلباء میں کافی مقبول تھے ۔ ہندو طلباء نے ان کے تبادلہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے انہیں کعبتہ اللہ کا تحفہ پیش کیا تھا اور یہ طلباء میں مقبول تھے لیکن آئیلا پور میں ان کے ساتھ بھگوا تنظیموں کی جانب سے کی گئی حرکت پر تمام افراد ناراضگی کا اظہار کررہے ہیں ۔

 

TOPPOPULARRECENT