Sunday , June 24 2018
Home / Top Stories / ششی تھرور کانگریس ترجمان کے عہدہ سے برخاست

ششی تھرور کانگریس ترجمان کے عہدہ سے برخاست

نئی دہلی۔ 13 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے آج ششی تھرور کو پارٹی کے ترجمان کے عہدہ سے علیحدہ کردیا کیونکہ وزیراعظم نریندر مودی کی ان کی جانب سے ستائش کو پارٹی کی کیرالا شاخ نے پسند نہیں کیا تھا۔ صدر کانگریس سونیا گاندھی نے تادیبی کمیٹی کی سفارشات قبول کرلیں کہ ششی تھرور کو ترجمان کے عہدہ سے فوری برخاست کردیا جائے۔ کیرالا پردیش کا

نئی دہلی۔ 13 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے آج ششی تھرور کو پارٹی کے ترجمان کے عہدہ سے علیحدہ کردیا کیونکہ وزیراعظم نریندر مودی کی ان کی جانب سے ستائش کو پارٹی کی کیرالا شاخ نے پسند نہیں کیا تھا۔ صدر کانگریس سونیا گاندھی نے تادیبی کمیٹی کی سفارشات قبول کرلیں کہ ششی تھرور کو ترجمان کے عہدہ سے فوری برخاست کردیا جائے۔ کیرالا پردیش کانگریس کمیٹی نے تادیبی کمیٹی کو اس بارے میں رپورٹ پیش کی تھی۔ پارٹی کے جنرل سیکریٹری جناردھن دیویدی نے اپنے صحافتی بیان میں کہا کہ کیرالا پردیش کانگریس کمیٹی نے چند دن قبل کُل ہند کانگریس کمیٹی کو تھرور کے خلاف ایک رپورٹ پیش کرتے ہوئے انہیں پارٹی ترجمان کے عہدہ سے برخاست کردینے کی سفارش کی تھی، کیونکہ نریندر مودی کی ستائش سے کانگریس کارکنوں کے جذبات مجروح ہوئے ہیں۔ اس اقدام پر طنز کرتے ہوئے ششی تھرور نے کہا تھا کہ اس کا مطلب یہ ہوگا کہ ریاستی قیادت زبانی خلاصوں کے بجائے درحقیقت تحریر کا مطالبہ کررہی ہے۔ کیرالا کانگریس کی شکایت ایک ایسے وقت سامنے آئی جبکہ ششی تھرور نے وزیراعظم کی ’’سوچھ بھارت‘‘ مہم کا برانڈ ایمبیسڈر بننے کی پیشکش قبول کرلی تھی۔ جب وزیراعظم امریکہ کے دورہ پر تھے، تو ششی تھرور بھی امریکہ پہنچ گئے تھے اور کئی ٹی وی چیانلس پر دیکھے گئے تھے۔ پارٹی ذرائع کے بموجب کانگریس نے انہیں وزیراعظم مودی کے دورہ امریکہ کے موقع پر وہاں موجود رہنے کی ذمہ داری انہیں نہیں سونپی تھی۔ تھرور گزشتہ جون سے ہی ذرائع ابلاغ سے کوئی ربط نہیں پیدا کررہے تھے۔ مودی کی تعریف سے کانگریس میں بڑے پیمانے پر تنازعہ پیدا ہوگیا تھا۔ ششی تھرور نے کہا کہ اگر ان کی پارٹی مودی کی کوششوں کا نوٹ نہیں لیتی اور انہیں جدیدیت اور ترقی کا اوتار ماننے کے بجائے نفرت انگیز شخصیت قرار دیتی ہے تو وہ اس سے متفق نہیں ہیں۔ کانگریس نے فوری ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ ششی تھرور کا شخصی نظریہ ہے۔ پارٹی نے کہا تھا کہ ذرائع ابلاغ سے بات کرتے وقت ششی تھرور کو یہ ذہن نشین رکھنا چاہئے کہ وہ پارٹی کے اہم عہدہ پر ہیں چنانچہ پارٹی مفادات ان کی اولین ترجیح ہونی چاہئیں۔ تادیبی کمیٹی نے کیرالا کانگریس کی سفارش پر آخرکار انہیں ترجمان کے عہدہ سے علیحدہ کردیا۔

TOPPOPULARRECENT