Monday , December 11 2017
Home / سیاسیات / شورش زدہ دارجلنگ سے فورس ہٹانے مرکز کا فیصلہ

شورش زدہ دارجلنگ سے فورس ہٹانے مرکز کا فیصلہ

ممتا بنرجی حکومت کو اعتراض
کولکتہ/دارجلنگ، 16اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال کی ممتا بنرجی حکومت نے شورش زدہ دارجلنگ سے اچانک نیم فوجی دستوں کی دس کمپنیاں ہٹالینے کی مرکز کے یکطرفہ فیصلے پر نکتہ چینی کی۔ ریاستی حکومت کا کہنا ہے کہ حالات کے ایسے موڑ پر ایسا نہیں ہونا چاہئے تھا کیونکہ یونیفارم بردار لوگ وہاں حملے کی زد میں ہیں۔ گورکھا جن مورچہ کے الزامات میں گھرے بمل گورنگ دھڑے نے بہرحال مرکزی حکومت کے اس اقدام کی ستائش کی ہے اور مرکزی وزیر راج ناتھ سنگھ کو ایک خط میں مورچہ کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ممتا بنرجی حکومت گورنگ کو ختم کرنے کے لئے سازش کررہی ہے اور اپنی فورس استعمال کررہی ہے لہذا مرکزی فوجی دستے ہٹالئے جائیں۔ وزارت داخلہ نے کل ریاستی محکمہ داخلہ کو کہا تھا کہ سی آر پی ایف کے ساتھ اور ایس ایس بی کے تین یعنی کل دس کمپنیاں جو دارجلنگ اور کالمپونگ میں اتاری گئی تھیں، پیر 16 اکتوبر سے ہٹائی جارہی ہیں۔ سی آر پی ایف کی باقی پانچ کمپنیا ں بدستور پہاڑی علاقے میں رہیں گی اور 20 اکتوبر تک پولیس کی مدد کرتی رہیں گی۔

TOPPOPULARRECENT