Wednesday , December 12 2018

شوپیان میں فوج کی فائرنگ6 شہری ہلاک

عوام شدید برہم ،کشمیرمیں ہڑتال عام شہریوں کی ہلاکت پر دکھی ہوں:محبوبہ مفتی

سری نگر۔5(مارچ سیاست ڈاٹ کام)جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان کے پہنو نامی گاؤں میں اتوار کی شام فوج کی فائرنگ سے 6عام شہریوں کی موت واقع ہوجانے کے خلاف وادی کشمیر میں پیر کے روز مکمل ہڑتال کی وجہ سے معمول کی زندگی بری طرح متاثر رہی۔ واضح رہے کہ پہنو شوپیان میں گذشتہ شام قریب8 بجے فائرنگ کا ایک واقعہ پیش آیا۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ جائے وقوع سے پیر کی صبح ایک اور نوجوان کی گولیوں سے چھلنی لاش برآمد ہوئی۔فائرنگ کے اس واقعہ کے بعد ریاستی پولیس کو جائے واقعہ سے ایک جنگجو اور 5 عام شہریوں کی لاشیں برآمد ہوئیں۔ فوج نے فائرنگ کے اس واقعہ کے فوراً بعد دعویٰ کیا تھا کہ اس کا جنگجوؤں کے ساتھ ایک مختصر مسلح تصادم ہوا جس کے دوران ایک جنگجو اور جنگجوؤں کے تین بالائی زمین ورکروں (اعانت کاروں) کو ہلاک کیا گیا۔تاہم وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے فوج کے دعوے کی قلعی کھولتے اپنے ایک ٹویٹ میں کہا کہ وہ شوپیان میں کراس فائرنگ میں ہوئی شہری اموات پر انتہائی دکھی ہیں۔ سبھی 6 مہلوک عام شہریوں گوہر احمد لون، سہیل احمد وگے ، شاہد خان اور شاہنواز وگے کی عمر 20 سے 25 برس کے درمیان تھی۔فوج کی فائرنگ سے عام شہریوں کی ہلاکت کے اس واقعہ پر وادی بھر میں شدید غم وغصہ پایا جارہا ہے ۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق قریب درجن بھر مقامات پر احتجاجیوں کی سیکورٹی فورسز کے ساتھ جھڑپیں ہوئیں۔ان جھڑپوں میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ کشمیری علیحدگی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ مولوی عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے نوجوانوں کی ہلاکت کے اس واقعہ کے خلاف مکمل ہڑتال کی کال دی تھی۔ دریں اثنائوزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے کہا کہ وہ جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان میں پیش آنے والے فائرنگ کے واقعہ میں عام شہریوں کی ہلاکت پر انتہائی دکھی ہیں۔ انہوں نے پیر کے روز مائیکرو بلاگنگ کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے ایک ٹویٹ میں کہا ‘شوپیان میں کراس فائرنگ میں ہوئی شہری اموات پر انتہائی دکھی ہوں۔ میں سوگوار کنبوں کے ساتھ تعزیت کا اظہار کرتی ہوں۔محترمہ مفتی کے اس ٹویٹ نے فوج کے اس دعوے کی قلعی کھول دی ہے جس میں فائرنگ کے واقعہ میں مارے گئے افراد کو جنگجوؤں کے بالائی زمین ورکرس (اعانت کار) قرار دیا گیا تھا

TOPPOPULARRECENT