Tuesday , October 16 2018
Home / شہر کی خبریں / شوگرفیکٹری کا سودا کرنے والوں کو کے سی آر کی تائید

شوگرفیکٹری کا سودا کرنے والوں کو کے سی آر کی تائید

بودھن میں بی جے پی کا جلسہ عام ‘ مرکزی وزیر مملکت ہنس راج گنگارام کا خطاب
بودھن ۔ 12مارچ ( سیاست نیوز) نظام شوگر فیکٹریشکر نگر مٹ پلی این ایس ایف یونٹ اور ممبوجی پلی میدک یونٹ کے احیاء کیلئے ضلع نظام آباد کے بی جے پی قائدین نے متم پیٹ مٹ پلی این ایس ایف تا شکر نگر بودھن تک تقریباً 120 کلومیٹر پدیاترا کیا ۔ تین مارچ کو مٹ پلی سے بی جے پی ضلعی قائدین نے اپنے پیدل سفر کا آغاز کیا تھا ۔ گذشتہ روز نویں دن وہ یہاں بودھن پہنچے ۔ امبیڈکر چوراستہ پر منعقدہ ایک جلسہ عام میں مرکزی وزیر مملکت ہنس راج گنگا رام آہیر نے این ایس ایف کی کشادگی کیلئے ایک یونٹ سے دوسرے یونٹ تک پیدل سفر کرنے والے بی جے پی قائدین کی ستائش کی ۔ مرکزی مملکتی وزیر نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ مسٹر کے سی آر اپنے انتخابی وعدے کو فراموش کرچکے ۔ این ایس ایف کو خانگی انتظامات سے حکومت اپنی تحویل میں لینے کے بجائے آج بند شوگر فیکٹری کا سودا کرنے والوں کی تائید کررہے ہیں ۔ ضلعی قائد دھرم پوری اروند نے کہا کہ صرف مودی ہی کے اقتدار میں کسانوں کو راحت حاصل ہوگی ۔ سابق رکن اسمبلی نظام آباد مسٹر وائی لکشمی نارائن نے کہا کہ این ایس ایف کے احیاء تک بی جے پی اپنا احتجاج جاری رکھے گی ۔ ضلع صدر بی جے پی مسٹر پلے گنگا ریڈی نے کہا کہ کے سی آر صرف ہوائی قلعہ باندھنے میں ماہر ہیں ۔ اس جلسہ عام سے بی جے پی قائدین سرینواس سبھاش نرسمہا ریڈی ‘ اے ایسگنگا ریڈی وغیرہ نے بھی خطاب کیا ۔ مرکزی وزیر گذشتہ روز ہیلی کاپٹر کے ذریعہ چار بجے پہنچے ۔ ان کے جلسہ گاہ تک پہنچنے میں ایک گھنٹہ لگا ۔ جلسہ گاہ میں پولیس کا سخت بندوبست رہا ۔ عوام کو میٹل ڈیٹکٹر گزر کر جلسہ گاہ تک پہنچنا پڑا ۔ ہیلی پیاڈ پر صرف 15 افراد کو پولیس نے مرکزی وزیر کے استقبال کی اجازت دی ۔ ہیلی کاپٹر مرکزی وزیر کو چھوڑ کر فوری واپس ہوگیا ۔ مرکزی وزیر شام میں کار سے روانہ ہوئے ۔

TOPPOPULARRECENT