Thursday , September 20 2018
Home / مضامین / شکاگو مسجدوں کا شہر

شکاگو مسجدوں کا شہر

میرسعادت علی خان
دوسری جنگ عظیم کی کامیابی کا سہرا امریکہ کے حق میں آیا ۔ 1945ء میں اقوام متحدہ کا قیام امریکہ میں ہوا ۔ تمام عالم کے ممالک اس تنظیم کے رکن بن گئے ۔ اس سے دنیا کے تمام مذاہب کے لوگ امریکہ میں قیام کرنے لگے ۔ رفتہ رفتہ دنیا بھر کے قابل ترین عوام امریکہ میں ملازمت کی تلاش میں جمع ہونا شروع ہوئے اور ان میں تمام مذاہب امریکہ میں اپنی اپنی مذہبی عبادت کرنے لگے ‘ انہیں امریکہ کی حکومت سے بھرپور اجازت اور آزادی سے مذہبی طور طریقہ ‘ رسومات اور عبادتیں انجام دی جانے لگی ان میں اسلامی مذہب کے عوام امریکہ کے تمام بڑے بڑے شہروں میں اپنی بستیاں آباد کرنے لگے ۔ شکاگوشہر امریکہ کا تیسرا سب سے بڑا شہر ہے یہ علاقہ امریکہ کی سرزمین میں مرکزی مقام پر واقع ہے جیسا ہندوستان میں تلنگانہ کا علاقہ مرکزی مقام رکھتا ہے اس طرح شکاگو بھی مرکزی علاقہ ہے ۔ 1960 سے حیدرآبادی مسلمان تلاش معاش کیلئے امریکہ کا رُخ کیا ۔ گذشتہ 50سال میں تقریباً چالیس لاکھ مسلمان عالم شکاگومیں آباد ہوگئے ‘ انہیں یہاں اپنی مذہبی آزادی ہے وہ اپنے طور پر عبادت انجام دے سکتے ہیں ۔
شکاگو میں پہلی مسجد1893ء میں بنائی گئی تھی ۔ یہ مسجد افریقی امریکن مسلمان نے تعمیر کی بعد میں 1940ء میں چار مسجدیں افریقی امریکن مسلمانوں نے تعمیر کی جن میںترکی ‘ عربی ‘ لبنان کے مسلمان عبادت کرتے ہیں ۔ شکاگو متحدہ امریکہ کی ریاست Illinois کا سب سے بڑا شہر ہے اس کیکُل ابادی سات ملین نفوس پر مشتمل ہے ۔ شکاگو تجارتی شہر ہے اس کا مرکزی مقام ڈاؤن ٹاؤن بہت خوبصورت ہمہ منزلہ عمارتوں کا علاقہہے ۔ دنیا کی بلند ترین عمارتوں میں Welson Tower بھی ایک بلند کامپلکس 120 منزلہ شاندار عمارت ہے اس علاقہ کے مرکزی مقام پر ایک مسجد ہے جس میں پانچ وقت کی نماز پابندی سے ہوتی ہے ۔ڈاؤن ٹاؤن میں کام کرنے والے تمام مسلمان اسی مسجد میں نماز ادا کرتے ہیں ‘ اس عمارت کی تیسری منزل پر کونسل آف اسلامک آرکنزیشن (CIOGC) کا آفس ہے وہ تمام شکاگو کے مساجد کا الحاق اس تنظیم کے زیر نگرانی انجام دیتا ہے ۔

شکاگو میں 120 مساجد اور اسلامی مرکز قائم ہیں ۔ ان میں یورپی ‘ افریقی ‘ ایشیائی ‘ جنوبی امریکی بلکہ تمام ممالک کے مسلمان عبادت کرتے ہیں ‘ سب سے زیادہ تعداد میں ہندوستانی مسلمان ہیںاور اس میں حیدرآبادی مسلمان کافی تعداد میں ہیں۔
M.C.C شکاگو کی مرکزی قدیم مسجد ہے ‘ یہ 1969ء میں ایک تھیٹر کو خرید کر ہندوستانی پاکستانی مسلمانوں نے مسجد مسلم کمیونٹی سنٹر کے نام سے آباد کیا ۔ ابتداء میں تمام مسلمان اس مسجد M.C.C میں عبادت کرتے تھے جو بھی مسلمان ہندوستان ‘پاکستان سے آتا تھا چاہے وہ مفتی ہو ‘حافظ ہو یا عالم ہو وہ اسی مرکز سے منسلک تھا بعد میں جیسے جیسے مسلمانوںکی آبادی بڑھنے لگی تو کئی بڑی بڑی مسجدیں تعمیر ہوئی ۔ شکاگو کی وDevonروڈ پر قریب قریب ایک میل کے علاقہ میں اس وقت 8مسجدیں آباد ہیں جہاں ہزاروں تعداد میں ہندو پاک کے مسلمان اور دوسرے بوسینائی ‘ افریقی تمام عبادت کرتے ہیں ۔ شکاگو میں بعض مسجدیں زمین خرید کر تعمیر کی گئی ہیں بہت خوبصورت گنبد اور مینار بھی تعمیر کئے ہیں جن میں دارالسلام ‘ M.E.C کی مسجد ‘ اسلامک فاؤنڈیشن والا پارک ‘ اسلامک فاؤنڈیشن برانچ ‘ مکی مسجد Elgin‘ مسجد الھدا ‘ مریم مسجد پورٹر علاقہ کی مسجد یہ سب مسجدیں جدید تعمیر کی گئی ہیں ۔ اس کے علاوہ کئی چرچ خرید کر مسجدیں بنائی گئی ۔ جامعہ مسجد دیوان روڈ بھی کافی بڑی مسجد ہے جس میں جمعہ کی نماز میں دو ہزار مسلمان نماز ادا کرتے ہیں ان مساجد میں دینی مدرسے بھی کام کررہے ہیں جہاں مسلمان بچوں کو دینی تعلیم کے علاوہ شعبہ حفظ بھی قائم ہیں اور بعض مسجدوں میں انگریزی اسکول بھی ہیں جو یہاں کا نصاب پڑھاتے ہیں اور ساتھ میں ایک گھنٹہ دینی تعلیم بھی دی جاتی ہے ۔ اسکول جو اسلامک سنٹر میں چلتے ہیں وہاں سے اسکول میں بھی عربی تعلیم کا انتظام ہے ۔ اس کے علاوہ M.E.C سنٹر مارٹن گرد میں اسکول کے اوقات میں نماز ظہر کی عملی تربیت دی جاتی ہے ‘ بچوں کو اذاں اور نماز پڑھانے کی تربیت دی جاتی ہے ۔ اس قدر زیادہ تعداد میںمسجدیں ہونے کے باوجود جمعہ کی نماز ایک بجے ایک جماعت ہوتی ہے ‘دوسری جماعت دوسرے امام 2بجے جمعہ کا خطبہ اور نماز پڑھاتے ہیں ۔
ICNA اور ISNA بہت بڑی اسلامی تنظیم ہیں ان کا سالانہ جلسہ شکاگو میں منعقد ہوتا ہے جس میں تمام امریکہ سے کوئی دس ہزار افراد شریک جلسہ ہوتے ہیں ۔ اس کے علاوہ Inter Faith Activities میں تمام دوسرے مذاہب کے ماننے والوں کو اسلام کے بارے میں معلومات پہنچاتے ہیں۔ اسلام کا Message ان تمام غیر مسلمین کو دیتے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT