Friday , August 17 2018
Home / ہندوستان / شہریوں کی شناخت کا فیصلہ حکومت نہیں کرسکتی:سپریم کورٹ

شہریوں کی شناخت کا فیصلہ حکومت نہیں کرسکتی:سپریم کورٹ

نئی دہلی ۔ /20 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) حکومت شہریوں کی شناخت کا فیصلہ نہیں کرسکتی۔ اس کے لئے حکومت کو بائیو میٹرک تفصیلات پر انحصار کرنا پڑتا ہے تاکہ شہریوں کی شناخت کا تعین کیا جاسکے ۔ ہائیکورٹ کے سابق جج نے آدھار اسکیم کو چیالنج کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے درخواست داخل کی تھی جس پر سپریم کورٹ نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ مرکز کا نمائندہ پروگرام آدھار اسکیم ہے جس کیلئے 2016 ء میں قانون منظور کیا گیا ہے ۔ تاہم 5 ججس پر مشتمل دستوری بنچ چیف جسٹس دیپک مشرا کی قیادت میں قائم کی گئی ہیں جو شہریوں کی شناخت کے تنازعہ کی یکسوئی کرسکتی ہے ۔ سینئر ایڈوکیٹ گوپال سبرامنیم نے سابق ہائیکورٹ جج کے ایس پٹا سوامی کی پیروی کرتے ہوئے آدھار اسکیم کے دستوری جواز کو چیالنج کیا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت فیصلہ نہیں کرسکتی کہ کونسے افراد ملک کے ارکان ہیں اور کونسے نہیں اس کیلئے انہیں دستوری شناخت پر انحصار کرنا پڑتا ہے ۔ کوئی مرد یا عورت اپنی حقیقی شخصیت کو کم نہیں کرسکتا ۔ بنچ میں سینئر وکیل نے جسٹس اے کے سیکری ، جسٹس اے این کھانولکر ، جسٹس ڈی وائی چندراچور اور جسٹس اشوک بھوشن کو آدھار قانون کی تفصیلات سے واقف کرواتے ہوئے کہا کہ یہ قانون غیردستوری ہے کیونکہ کئی فیصلے کئے جاچکے ہیں کہ حق خلوت انفرادی بنیادی حق ہے جس میں مملکت کو مداخلت کا کوئی حق حاصل نہیں ہے ۔ سینئر قانون داں نے کہا کہ حکومت کا کہنا ہے کہ آدھار اسکیم سماجی فلاح و بہبود کیلئے ہے لیکن اس کے نتائج بدترین ظاہر ہورہے ہیں اور عملی اعتبار سے یہ واضح طور پر ایک مضر قانون بن گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT