Saturday , June 23 2018
Home / شہر کی خبریں / شہری علاقوں کو کنکریٹ کا جنگل بنانے سے گریز کا مشورہ

شہری علاقوں کو کنکریٹ کا جنگل بنانے سے گریز کا مشورہ

حیدرآباد۔7اکٹوبر ( سیاست نیوز/آئی این این ) گورنر ای ایس ایل نرسمہن نے آج یہاں حیدرآباد انٹرنیشنل کانفرنس سنٹر میں 11ویں عالمی میٹرو پولسِ کانگریس کا افتتاح کیا ۔ یہ پہلا موقع ہے کہ یہ عالمی کانفرنس ہندوستان کے کسی شہر میں منعقد ہورہی ہے ۔ گورنر نرسمہن نے کہا کہ اس بین الاقوامی کانفرنس میں سرکاری اداروں اور خانگی کمپنیوں کو مستقبل ک

حیدرآباد۔7اکٹوبر ( سیاست نیوز/آئی این این ) گورنر ای ایس ایل نرسمہن نے آج یہاں حیدرآباد انٹرنیشنل کانفرنس سنٹر میں 11ویں عالمی میٹرو پولسِ کانگریس کا افتتاح کیا ۔ یہ پہلا موقع ہے کہ یہ عالمی کانفرنس ہندوستان کے کسی شہر میں منعقد ہورہی ہے ۔ گورنر نرسمہن نے کہا کہ اس بین الاقوامی کانفرنس میں سرکاری اداروں اور خانگی کمپنیوں کو مستقبل کے شہروں کیلئے قیادت ‘ منصوبہ بندی ‘ ترقیات اور انفراسٹرکچر جیسے شعبوں پر باہمی تبادلہ خیال کے آغاز کا ایک منفرد موقع فراہم کیا ہے ۔ انہوں نے میٹرو پولس کانگریس کو اپنی کانفرنس کے انعقاد کیلئے حیدرآباد کا انتخاب کرنے پر مبارکباد دی اور کہا کہ حیدرآباد ایک پُرکشش شہر ہے اور بالخصوص ایسی کانفرنسوں کیلئے ایک انتہائی موزوں مقام ہے ۔ انہوں نے میٹروپولس کانگریس کو افکار و نظریات کی پیشکشی کا ایک بہترین پلیٹ فارم قرار دیا ۔ انہوں نے کہا کہ شہر کی منصوبہ بندی کرنے والوں اور قائدین کی فہم و فراست اور دانشمندی مشترکہ طور پر ایک بہتر اور خوشحال شہر کی تخلیق کا باعث بن سکتی ہے ۔

انہوں نے دنیا کے اکثر شہروں کو درپیش مختلف مسائل کا تذکرہ کیا اور کہا کہ دیہی عوام کی شہری علاقوں کو منتقلی بھی ایک اہم مسئلہ ہے لیکن دیہی عوام محض کس لئے شہروں کو منتقل ہورہے ہیں کہ وہاں زائد مواقع موجود ہیں ۔ گورنر نرسمہن نے کہا کہ عالمی میٹرو پولس کانگریس نے اس کانفرنس کو ’ سب کیلئے شہریں‘ کا عنوان دیا ہے جو موجودہ حالات اور تقاضوں سے پوری طرح ہم آہنگ ہے کیونکہ ہمارے شہروں کو شمولیاتی ترقی کی ضرورت ہے ۔مسٹر نرسمہن نے کہا کہ شہری علاقوں کو کنکریٹ کا جنگل بنائے بغیر سیٹلائٹ ٹاؤن شپ قائم کرنے کی ضرورت ہے جو بڑھتی ہوئی شہری آبادی کو امکنہ اور دیگر سہولتیں فراہم کرنے کے مسئلہ کا واحد حل ہے ۔ اس کے ذریعہ شہریوں کو صحت کی ضمانت دی جاسکتی ہے ۔ علاوہ ازیں مؤثر ڈرینج سسٹم ‘ کچرے کی نکاسی کا انتظام ‘ توانائی کی سیکیورٹی ‘ مناسب مواصلاتی ذرائع ‘ تحفظ و سلامتی ‘ تاریخی و تہذیبی ورثوں کے تحفظ کو یقینی بنانے کیلئے شہروں کی ترقی کے عمل میں شہریوں کو شامل کرنا ضروری ہے ۔

تلنگانہ کے چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے اس موقع پر مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ حیدرآباد کو 11ویں میٹروپولس کانگریس کے انعقاد کا غیرمعمولی اعزاز حاصل ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک عالمی معیار کی اسمارٹ سٹی کے فروغ کیلئے حکومت تلنگانہ ایک جامع ماسٹر پلان تیار کررہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حیدرآباد ایک تاریخی اور مشترکہ تہذیبی شہر ہے جہاں کثرت میں وحدت ہے جو اس شہر کی منفرد پہچان بھی ہے ۔ مسٹر چندر شیکھر راؤ نے کانفرنس کی کامیابی کیلئے اپنی نیک خواہشات کا اظہار کیا ۔ مرکزی وزیر شہری ترقیات و پارلیمانی اُمور ایم وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ملک بھر میں دیہی عوام کے نقل مقام سے شہروں میں درکار انفراسٹرکچر کی فراہمی کے دباؤ میں بھی مسلسل اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کے 100شہروں کو اسمارٹ سٹی بنانے وزیراعظم کے فیصلے پر مختلف گوشوں سے غیرمعمولی توجہ دیکھی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسمارٹ سٹیز کو چاہیئے کہ ترقی ‘ معاشی خوشحالی اور پائیداری میں ایک دوسرے سے مسابقت کریں ۔ انہوں نے کہا کہ شہروں کو چاہیئے کہ وہ پانی ‘ ڈرینج سسٹم ‘ صحت و صفائی‘ قابل اعتبار مفاد عامہ کی خدمات ‘ عالمی معیار کی طبی سہولتیں ‘ پُرکشش سرمایہ کاری ‘ یقینی شفافیت اور پائیدار ترقی فراہم کریں ۔

TOPPOPULARRECENT