Wednesday , June 20 2018
Home / شہر کی خبریں / شہر میں صفائی اور آبی آلودگی میں غیر معمولی ا ضافہ

شہر میں صفائی اور آبی آلودگی میں غیر معمولی ا ضافہ

شہریوں کی صحت کو خطرہ ، انوائرامنٹ پروٹیکشن ٹریننگ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے سروے میں انکشاف

حیدرآباد /10 جنوری ( سیاست نیوز ) انوائرامنٹ پروٹیکشن ٹریننگ اینڈ ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے سروے میں اس بات کا انکشاف ہوا ہے کہ شہریان حیدرآباد کو سانس لینے کے دوران کاربن ڈائی آکسائڈ ، سلفر آکسائیڈ ، نائٹروجن اور دیگر کئی زہریلے مادوں کا سامنا ہے ۔ جو انسان کو شدید بیماریوں کا بموجب بن سکتے ہیں ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ شہر میں جابجا بڑی بڑی عمارتوں کی تعمیر ، بھاری مقدار میں فیاکٹریوں اور کچرے جلانے سے نکلنے والا دھواں کے علاوہ دیگر کئی اور بھی وجوہات ہیں ۔ ہوا میں ایک کیوبک میٹر میں صرف 4 گرام سلفر ڈائی آکسائڈ کی ضرورت ہوتی ہے جو خطرناک حد تک 40 گرام تک پہونچ گئی ۔ شہر میں نہ صرف ہوا زہریلی ہے بلکہ پینے کے پانی کی بھی وہی حالت ہے ۔ 2005 تا 2015 کے درمیانی عرصہ کے دوران آب و ہوا کو آلودہ کرنے والے زہریلے مادوں میں خطرناک حد تک اضافہ ہوا ہے ۔ بالخصوص شہر حیدرآباد اس سے شدید طور پر متاثر ہے ۔ تلنگانہ پولیشن کنٹرول بورڈ کے اشتراک سے ای پی ٹی آر آئی نے تحقیقات میں کئی طرح کے خطرناک انکشافات میں واضح کیا کہ حکومت اور عوام کو فوری بیدار ہونے کی ضرورت ہے ۔ کیونکہ کمیکل زہریلی مادے شدید طور پر اثر انداز ہو رسکے ہیں ۔ ای پی ٹی آر آئی نے ریاستی سطح پر 10 شہروں میں سروے کرکے ان نتیجوں کو اخذ کیا ہے ۔ عام طور سے کیوبک میٹر میں 60 ملی گرام نائیٹروجن آکسائڈ کافی ہے جو 99 ملی گرام تک پہونچ گئی ہے اور یہ شہر حیدرآباد میں 2015 میں 128 ملی گرام تا 180 ملی گرام ریکارڈ کی گئی ہے ۔ جبکہ ورنگل اور محبوب نگر میں 108 ملی گرام اور بولارم میں 217 ملی گرام ریکارڈ کی گئی ہے ۔ سال 2015 حیدرآباد میں 16,201 ٹن سلفرڈآئی اکسائیڈ 60,321 ٹن نائٹروجن 96,83,503 ٹن کاربن ڈائی آکسائڈ ریکارڈ کی گئی ہے ۔ جس میں 2020 تک 10 فیصد اضافہ کے امکانات ہیں ۔ شہری آلودگی میں حیدرآباد کے علاقے سرور نگر ، عثمان ساگر ، حمایت ساگر ، حسین ساگر ، میر عالم تالاب ، بڑا تالاب اور درگم کے تالاب خطرناک زمرہ ’ ای ‘‘ تک پہونچ گئے ہیں ۔ تو دوسری جانب صوتی آلودگی میں بھی خطرناک اضافہ ہوا ہے ۔ احتیاطی اقدامات کے طور پر دونوں شہروں میں چلائی جانے والی 15 برس کی قدیم گاڑیوں پر امتناع حمڈا کے حدود میں جدید آٹوز کے رجسٹریشن پر امتناع اور 8 برس سے قدیم چار پہیوں والی ڈیزل گاڑیوں پر امتناع عائد کرنے سے متعلق ای پی ٹی آر آئی نے سفارش کی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT