Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر میں موسمی و زہریلی بخار ، فیور ہاسپٹل میں مریضوں کا اژدھام

شہر میں موسمی و زہریلی بخار ، فیور ہاسپٹل میں مریضوں کا اژدھام

عثمانیہ دواخانہ اور گاندھی ہاسپٹل میں بھی ملیریا ، ڈینگو اور ٹائیفائیڈ کے مریض رجوع ، شہر میں گندگی اور مچھروں کی کثرت
مندرجہ ذیل احتیاط برتنا چاہئے
l 48 گھنٹوں سے زائد بخار میں مبتلا ہوں تو فوری ڈاکٹرس سے رجوع کریں ۔
l مکھیوں اور مچھروں سے پاک صاف ماحول اپنائیں ۔
l پکوان اور کھانے سے پہلے ہاتھوں کی صفائی کریں ۔
l بچے اسکول سے گھر آتے ہی ہاتھ ، منہ اور پیروں کی صفائی کریں ۔
l تولیہ اور دستیاں ہر ایک فرد علحدہ استعمال کریں ۔
l ہمیشہ گرم غذا کا استعمال کریں ۔
l وقت پر کھائیں اور وقت پر سوئیں ۔
l چربی اور گوشت کے استعمال سے پرہیز کریں ۔
l پانی خوب گرم کر کے ٹھنڈا ہونے کے بعد پئیں ۔
l مریضوں کو بآسانی ہضم ہونے والی غذا دیں ۔
l مریض ، نیمبو کا رس ، بارلی چاول کا حریرہ ، چھاچھ اور گلوکوز کا زیادہ استعمال کریں ۔

حیدرآباد ۔ 19 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : شہر میں واقع فیور ہاسپٹل کے شعبہ آوٹ پیشنٹ سے ہزاروں مریض رجوع ہو کر اپنا علاج کروا رہے ہیں ۔ علاوہ ازیں دواخانہ عثمانیہ ، گاندھی اور نیلوفر میں بھی مریض اسی تعداد میں رجوع ہورہے ہیں ۔ دواخانہ عثمانیہ سے 2200 ، دواخانہ گاندھی سے 1800 اور دواخانہ نیلوفر سے 950 مریض رجوع ہوئے ہیں ۔ ڈاکٹرس کے مطابق اس تعداد میں نصف سے زائد موسمی و زہریلی بخار میں مبتلاء مریض ہی ہیں اور مریض قئے ، متلی ، بخار اور جوڑوں کے درد میں مبتلا ہیں اور مریضوں کی زیادہ تعداد زہریلی بخار جیسے ملیریا ، ڈینگو اور ٹائیفائیڈ میں مبتلا ہے جس کی وجہ یہ ہے کہ تقریبا ایک ہفتہ سے وقتا فوقتاً ہونے والی بارش ہے اور اس بارش کی وجہ سے بیماریاں ، حملہ آور ہورہی ہیں اور بارش کی وجہ سے بستیاں ، سلم علاقے اور کالونیاں گندگی سے بھری ہوئی ہیں اور گندگی کی عدم صفائی کی وجہ سے مچھروں کی افزائش میں بے تحاشہ اضافہ ہوا ہے ۔ شہر میں ڈینگو کے مریضوں میں کافی اضافہ ہورہا ہے اور شہر کے ہر ایک دواخانہ میں ڈینگو مریضوں کی تعداد ہی زیادہ ہے اور امسال حیدرآباد کے محکمہ صحت میں ڈینگو مریضوں کی ہی زیادہ تعداد درج کی گئی ہے ۔ ڈاکٹرس کے مطابق سرکاری و خانگی دواخانوں سے روزانہ 10 ڈینگو مریض رجوع ہورہے ہیں اور موسمی بخار سے رجوع ہونے والے ہر دس مریضوں میں ایک ڈینگو مریض کی نشاندہی کی جارہی ہے ۔ شہر کے ہر ایک گھر میں ایک یا دو افراد بخار میں مبتلا ہیں ۔ اور روزانہ دواخانوں میں شریک ہونے والوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے اور عوام میں اس بات کا خوف ہے کہ وہ کسی بھی طرح کی بخار لاحق ہونے پر سوائن فلو ہونے کا خدشہ ظاہر کررہے ہیں ۔ سخت بخار ، الٹیاں ، سر درد ، متلی ، گلے میں درد ، کھانسی اور ٹائیفائیڈ جیسی بیماریاں عوام کو بے حد پریشان کررہی ہیں جس کی وجہ سے شہر کے تمام دواخانوں میں مریضوں کی کافی تعداد دیکھی جارہی ہے ۔ دواخانہ عثمانیہ کے ڈاکٹر ناگیندرا کے بموجب موسم میں رطوبت کی وجہ سے موسمی بخار میں اضافہ ہوا ہے ۔ یہاں تک کہ بعض گھروں میں تمام افراد بخار میں مبتلا ہیں یا ایک کے بعد دیگر اس بیماری میں مبتلا ہورہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ سرد موسم کی وجہ سے وائرس طاقتور ہوجاتا ہے جس کی وجہ سے گھر میں ایک فرد پر بھی وائرس حملہ کرتا ہے تو یہ وائرس خاندان کے دیگر افراد پر بھی حملہ کر کے بیمار کردیتا ہے کیوں کہ یہ وائرس متعدی ہے ۔ لہذا بھیڑ بھاڑ سے دور گھروں اور کیروں کی بروقت صفائی ضروری ہے ۔ علاوہ ازیں واٹر فلٹر کی صفائی اور گھر سے باہر پانی اور غذا کے استعمال میں احتیاط برتنا چاہئے اور خصوصا شوگر ، بی پی ، دل کے مریض اور سانس لینے میں تکلیف محسوس کرنے والے افراد زیادہ احتیاط برتیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT