Monday , April 23 2018
Home / شہر کی خبریں / شہر کے دس بلدی حلقوں میں آئندہ ماہ آبرسانی مسئلہ کا حل1900 کروڑ کے فنڈس سے اقدامات

شہر کے دس بلدی حلقوں میں آئندہ ماہ آبرسانی مسئلہ کا حل1900 کروڑ کے فنڈس سے اقدامات

عالمی بینک سے امداد ، پراجکٹس کی فوری تکمیل کی ہدایت
حیدرآباد۔15جنوری(سیاست نیوز) حیدرآباد کے 10بلدی سرکل میں موجود پینے کے پانی کی سربراہی کا مسئلہ فروری کے اواخر تک حل کرلیا جائے گا۔ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے حدود میں موجود 10 بلدی سرکلس میں 1900 کروڑ کے فنڈس سے آبی سربراہی کے اقدامات کئے جا رہے ہیں اور اس کیلئے ہاؤزنگ اینڈ اربن ڈیولپمنٹ کارپوریشن لمیٹیڈ کی جانب سے فنڈس کی اجرائی عمل میں لائی جا چکی ہے۔ الوال‘ کاپرا‘ اپل‘ رامچندراپورم‘ ایل بی نگر‘ راجندر نگر ‘ قطب اللہ پور ‘ کوکٹ پلی‘ شیر لنگم پلی اور پٹن چیرو جہاں گذشتہ برس تک بھی ہفتہ میں دو مرتبہ پانی کی سربراہی عمل میں لائی جاتی تھی ان بلدی سرکلس میں اب پانی کی سربراہی کو بہتر بنانے کے اقدامات کئے جانے لگے ہیں۔ HUDCOکے پراجکٹ کے آغاز کے بعد اب ان علاقو ںکے مکینوں کو ایک یوم کے وقفہ سے پانی کی سربراہی عمل میں لائی جا رہی ہے۔محکمہ آبرسانی کے عہدیداروں کے مطابق اس پراجکٹ کو فروری کے اختتام تک مکمل کرلیا جائے گا اور اس کا فائدہ 1لاکھ سے زائد مکینوں کو ہوگا۔ مسٹر ایم دانا کشور منیجنگ ڈائریکٹر حیدرآباد میٹروپولیٹین واٹر ورکس اینڈسیوریج بورڈ کے مطابق آئندہ ماہ کے دوران HUDCOکے پراجکٹ کو مکمل کرنے کی ہدایت دی جاچکی ہے اور پراجکٹ کی تکمیل کے ساتھ ہی مذکورہ بلدی سرکلس اور اس کے اطراف کے علاقوں میں پانی کی سربراہی مزید بہتر ہوتی جائے گی۔انہوںنے مزید بتایاکہ اس پراجکٹ میں عالمی بینک کی جانب سے 338کروڑ روپئے کی امداد شامل ہے جو کہ 56 ذخائر آب کی تعمیر کا 80فیصد حصہ ہے۔ شہر کے نواحی علاقوں میں بہتر شہری سہولیات کی فراہمی کے سلسلہ میں پانی کی سربراہی کے مسئلہ کے سبب جو مسائل پیدا ہورہے تھے وہ اب ختم ہوجائیں گے اور شہریوں کو مؤثر پانی کی سربراہی ممکن بنائی جائے گی۔ محکمہ آبرسانی کی جانب سے اب شہر میں مؤثر پانی کی سربراہی کے بعد اطراف کی گرام پنچایتوں اور دیہی علاقوں میں پانی کی سربراہی کے پراجکٹ پر توجہ مرکوز کی جائے گی جو آؤٹر رنگ روڈ کے اطراف ہیں۔ ORRکے اطراف موجود ان گرام پنچایتوں میں پینے کے پانی کی سربراہی کو بہتر بنانے کا جو پراجکٹ تیار کیا گیا ہے اس کا تخمینہ 628کروڑ کا لگایاگیا ہے اور اس میں زیر زمین سیوریج نظام کی تعمیر کا بھی منصوبہ ہے ۔ بتایاجاتا ہے کہ فروری کے اختتام میں HUDCOکے پراجکٹ کو مکمل کرنے کے بعد ہی اس پراجکٹ کو شروع کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT