Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر کے متعدد سرکاری دواخانوں میں چلڈرنس اسپیشلسٹ ڈاکٹرس کی قلت

شہر کے متعدد سرکاری دواخانوں میں چلڈرنس اسپیشلسٹ ڈاکٹرس کی قلت

نیلوفر ہاسپٹل پر انحصار ، میٹرنٹی ہاسپٹلس میں زچہ اور بچہ کی نگہداشت مشکل
حیدرآباد ۔ 25 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : شہر میں واقع چار بڑے دواخانے ، پانچ ایریا میٹرنیٹی چھ زونل میٹرنیٹی دواخانوں میں دو دواخانوں کے سوا دیگر دواخانوں میں چلڈرنس اسپیشلسٹ ڈاکٹرس نہیں ہیں جس کی وجہ سے نومولود بچوں کو امراض لاحق ہونے پر نیلوفر دواخانہ کو روانہ کیاجاتا ہے۔ اسی لیے زچگی دواخانوں میں بچوں کے ڈاکٹرس 24 گھنٹے خدمات پر دستیاب رہنا ضروری رہتا ہے ۔ تاہم ان دواخانوں میں پیڈیا ٹرکس ڈاکٹرس نہیں ہیں اور ان دواخانوں میں بچوں کے ایمرجنسی وارڈس بھی قائم نہیں کئے گئے ہیں ۔ جس کی وجہ سے نومولود مریض بچوں کو دیگر دواخانوں سے رجوع کیا جارہا ہے ۔ کافی اہمیت والے پیٹلہ برج زچگی دواخانہ اور سلطان بازار زچگی دواخانے میں 24 گھنٹے خدمات انجام دینے والے ڈاکٹرس نہیں ہیں جس کی وجہ سے بروقت ان نومولود بچوں کو علاج دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے انتقال کر جارہے ہیں ۔ شہری علاقوں لالہ پیٹ ، پانی پورہ ، شری رام نگر ، جنگم میٹ ، عنبر پیٹ ، زچگی دواخانوں اور ملک پیٹ ، کنگ کوٹھی ، گولکنڈہ ، شاہ علی بنڈہ ، بارکس اور نامپلی ایریا دواخانوں میں بھی انہیں مسائل کا انبار ہے ۔ اس دواخانہ میں دوپہر 2 بجے کے بعد کوئی بچوں کے ڈاکٹرس نہیں رہتے اس دواخانے میں روزانہ 50 ، 60 زچگیاں کی جاتی ہیں اور اس دواخانے میں ایک پروفیسر دو اسسٹنٹ پروفیسر خدمات انجام دیتے ہیں اور یہ ڈاکٹرس صبح 8 تا دوپہر 2 بجے تک خدمات انجام دیتے ہیں ۔ جب کہ سلطان بازار زچگی دواخانہ میں نومولود بچوں کے علاج کے لیے ایک خاتون ڈاکٹر کا تقرر کیا گیا ہے اور یہ خاتون ڈاکٹر بھی دوپہر 2 بجے تک دستیاب رہتی ہیں ۔ اور اس دواخانہ میں روزانہ اوسطا 40 ، 50 زچگیاں انجام دی جاتی ہیں اور اس دواخانہ میں بچوں کو علاج دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے نیلوفر دواخانہ سے رجوع کیا جاتا ہے جب کہ پیٹلہ برج زچگی دواخانہ سے روزانہ 15 اور مقامی زچگی دواخانوں سے روزانہ 25 نومولود بچوں کو نیلوفر دواخانہ سے رجوع کیا جاتا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT