Friday , December 15 2017
Home / ہندوستان / شیرخوار بچوں کی اموات یوگی حکومت کی بدترین غفلت کا نتیجہ

شیرخوار بچوں کی اموات یوگی حکومت کی بدترین غفلت کا نتیجہ

سرکاری اسپتال کے واقعہ کی انکوائری اور ریاستی وزیر صحت سے استعفیٰ کا مطالبہ۔ اپوزیشن ایس پی و بی ایس پی کا ردعمل
لکھنؤ12اگست (سیاست ڈاٹ کام )گورکھپور کے سرکاری اسپتال میں شیرخوار بچوں کی اموات کو اترپردیش حکومت کی صریح مجرمانہ غفلت کا نتیجہ قرار دیتے ہوئے ایس پی اور بی ایس پی نے آج اِس واقعہ کی اعلیٰ سطح کی انکوائری کا مطالبہ کیا۔ ریاست کی دونوں اپوزیشن پارٹیوں نے گورکھپور کو اپنی ٹیمیں بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سماجوادی پارٹی کا وفد آج اپوزیشن لیڈر رام گووند چودھری کی قیادت میں گورکھپور کے بابا راگھو داس میڈیکل کالج میں ہوئی اموات کی حقیقت جاننے اور مریضوں کا حال پوچھنے کے لئے گورکھپور کیلئے روانہ ہوگیا۔ ایس پی ذرائع نے آج بتایا کہ ایس پی لیڈر اور اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر رام گووند چودھری، سابق وزیر صحت رادھے شیام سنگھ، ایم ایل سی سنی یادو گورکھپور کیلئے روانہ ہوگئے ہیں۔ گورکھپور ایس پی سٹی پریسیڈنٹ بھی اس وفد میں شامل ہوں گے۔ پارٹی ذرائع نے بتایا کہ یہ ایک سنگین معاملہ ہے ۔ آکسیجن کی کمی کی وجہ 60 بچوں کی موت ہوگئی۔ مرنے والوں کے خاندان کو 20 لاکھ روپے کی مالی مدد دی جانی چاہئے۔ اس معاملے کی جانچ کی جانی چاہئے ۔ ایس پی ٹیم سے اپنی رپورٹ 13 اگسٹ تک پارٹی سربراہ کو پیش کرنے کے لئے کہا گیا ہے۔ دریں اثناء بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے یہاں ایک بیان میں کہاکہ گورکھپور کے سرکاری اسپتال میں 6 ، 7 یوم میں 60 بچوں کا فوت ہوجانا سنگین معاملہ ہے۔ یہ بی جے پی حکومت کی بدترین غفلت و لاپرواہی کا ثبوت ہے۔

اِس سانحہ کے لئے یوگی ادتیہ ناتھ حکومت کو مورد الزام ٹھہراتے ہوئے صدر ایس پی اکھلیش یادو نے دعویٰ کیاکہ دواخانہ میں آکسیجن سپلائی کی قلت اِس واقعہ کا سبب بنی۔ آکسیجن سربراہ کرنے والی کمپنی نے اسپتال کو مطلع کردیا تھا کہ اگر ادائیگی نہ کی گئی تو سربراہی روک دی جائے گی اور حکومت کو معلوم ہونا چاہئے کہ یہ اموات آکسیجن کی قلت کے سبب پیش آئی ہیں۔ اُنھوں نے بیان کہاکہ اموات کی حقیقی تعداد اپوزیشن کے پاس دستیاب نہیں ہے۔ بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے بھی الزام عائد کیاکہ عوام کی بہبود کے مسائل بی جے پی کی حکومتوں کے لئے کوئی معنی نہیں رکھتے۔ ترنگا، وندے ماترم، مدرسہ، اینٹی رومیو اسکواڈ جیسے مسائل اُن کے لئے بڑی اہمیت رکھتے ہیں تاکہ وہ عوام کی توجہ سنگین مسائل سے ہٹاسکیں۔ مایاوتی نے کہاکہ یہ واقعہ ایسے وقت رونما ہوا جب چیف منسٹر گورکھپور کے دورے پر تھے اور اپنی سیاسی سرگرمیوں سے وقت نکال کر پوجا پاٹ میں مشغول تھے۔ اِس سارے معاملے نے بی جے پی حکومت کی کارکردگی اور انداز کے بارے میں کئی سوال کھڑے کردیئے ہیں۔ اِس دوران راشٹریہ لوک دل کے صدر ریاستی یونٹ مسعود احمد نے کہاکہ یہ سنگین تشویش کا معاملہ ہے ، ضلع نظم و نسق اور اسپتال کے ذمہ داران اپنی کوتاہیوں کو چھپانے کی کوشش کررہے ہیں۔ اُنھوں نے ریاستی وزیر صحت سدھارتھ ناتھ سنگھ سے استعفے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT