Thursday , November 23 2017
Home / دنیا / شینزوابے کی اہلیہ نے عطیہ دیا، جاپانی اسکول کا دعویٰ

شینزوابے کی اہلیہ نے عطیہ دیا، جاپانی اسکول کا دعویٰ

ٹوکیو، 23 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) جاپان میں سیاسی گھپلے پر جاپانی نیشنلسٹ اسکول کے سربراہ نے آج پارلیمنٹ میں دیئے گئے حلف نامہ میں کہا کہ اسکول کو وزیر اعظم شینزوآبے کی بیوی سے ایک ارب ین چطیہ ملا ہے ۔  اس تنازعہ سے مسٹر آبے کی حمایت میں بھی کمی آئی ہے اور یہاں تک کہ جاپانی اسٹاک بھی آج تھوڑے کم سطح پر پہنچ گیا ہے ۔مسٹر آبے نے کہا کہ نہ تو وہ اور نہ ہی ان کی بیوی اکائي نے ملک کے مغربی حصے اوساکا میں سویٹ ھرٹ زمین سودے میں مداخلت کی ہے ۔مریٹومو گاکے تعلیمی گروپ نے ایک پرائمری اسکول کی تعمیر کے لئے کم قیمت پر سرکاری ملکیت والی زمین خریدی ہے جس میں سیاسی مداخلت کی بات سامنے آئی ہے ۔مسٹر آبے نے یاسونوري کگوئی کے کی طرف لگائے گئے الزامات سے انکار کیا ہے ۔ مسٹر کگوئی کے نے کہا تھا کہ وزیر اعظم کی جانب سے اسکول کو ایک ارب ین عطیہ دیا گیا ہے اور ہمیں وہاں کے پرنسپل کے عہدے سے ہٹا دیا جائے گا۔وزیر اعظم کی بیوی اکائي کو اسکول میں اعزازی پرنسپل بنایا گیا ہے ۔ اس اسکول میں طالب علموں کو حب الوطنی موضوع پر پڑھانے کے لئے کورس تیار کیا گیا ہے ۔ اسکول میں گھپلے کا معاملہ سامنے آنے پر محترمہ آکائی نے اپنا نام وہاں سے ہٹا لیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT