Tuesday , September 25 2018
Home / سیاسیات / شیوسینا اور بی جے پی اتحاد ممکن،منوہر جوشی کا اشارہ

شیوسینا اور بی جے پی اتحاد ممکن،منوہر جوشی کا اشارہ

ممبئی۔ 17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اِن قیاس آرائیوں کے درمیان کہ آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت نے ادھو ٹھاکرے سے بات چیت کرتے ہوئے انہیں حکومت مہاراشٹرا میں شرکت کی ترغیب دی ہے، شیوسینا نے آج پُرامید رجحان ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کے ساتھ مخلوط حکومت ممکن ہے۔ شیوسینا کے قائد منوہر جوشی نے کہا کہ شیوسینا کے بی جے پی کے ساتھ اتحاد کے

ممبئی۔ 17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اِن قیاس آرائیوں کے درمیان کہ آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت نے ادھو ٹھاکرے سے بات چیت کرتے ہوئے انہیں حکومت مہاراشٹرا میں شرکت کی ترغیب دی ہے، شیوسینا نے آج پُرامید رجحان ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کے ساتھ مخلوط حکومت ممکن ہے۔ شیوسینا کے قائد منوہر جوشی نے کہا کہ شیوسینا کے بی جے پی کے ساتھ اتحاد کے قوی امکانات ہیں کیونکہ دونوں کے اصول ہندوتوا پر مبنی ہیں، لیکن ہم نہیں جانتے کہ ایسا کب ہوگا۔ قطعی فیصلہ ادھو کو ہی کرنا ہے۔ وہ شیوسینا کے آنجہانی صدر بال ٹھاکرے کو ان کی دوسری برسی پر شیواجی پارک میں خراج عقیدت پیش کرنے کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ مستقبل میں مہاراشٹرا کا چیف منسٹر شیوسینا کا ہی ہوگا، لیکن بعض کاموں کے لئے وقت لگتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ خوش قسمت تھے کیونکہ وہ بالا صاحب کی زندگی میں ان کا سایہ بنے ہوئے تھے۔ بالا صاحب جیسی قدآور شخصیتیں دوبارہ جنم نہیں لیتیں۔ یہ بدبختی ہے کہ سابق حکومت ان کی یادگار قائم کرنے میں ناکام رہی۔ دریں اثناء بی جے پی کے سینئر قائد ونود تاؤڑے نے کہا کہ وہ آر ایس ایس سربراہ اور شیوسینا کے صدر کے درمیان ٹیلی فون پر کسی بھی بات چیت کا کوئی علم نہیں رکھتے۔ انہیں یہ سن کر حیرت ہوئی کہ انہوں نے کہا کہ ہمارا ہمیشہ سے یہ احساس رہا ہے کہ ریاستی حکومت تشکیل دینے میں دونوں پارٹیوں کو متحد ہوجانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ میں نہیں جانتا کہ شیوسینا نے قائد اپوزیشن کا عہدہ کیوں طلب کیا ہے۔ دریں اثناء شیوسینا نے اپنی سابق حلیف بی جے پی کے ساتھ کسی بھی اتحاد کے امکانات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ برسراقتدار پارٹی کی اُمیدیں عوام نے چکناچور کردی ہیں۔ مہاراشٹرا اسمبلی میں خط اعتماد کے حصول کے دوران جو کچھ ہوا، اس سے عوام مایوس ہیں۔ شیوسینا کے ترجمان ’’سامنا‘‘ کے ایک اداریہ میں پارٹی نے تحریر کیا ہے کہ ہمیں اسمبلی انتخابات کے دوران کیا غلطی ہوئی، سنجیدگی سے سوچنا چاہئے اور بعد میں جو کچھ ہورہا ہے، وہ بھی قابل غور ہے، لیکن مہاراشٹرا کو حال ہی میں جو غلط کاریاں ہوئی ہیں، ان پر افسوس کرنا چاہئے اور بی جے پی کو شیوسینا سے مستقبل میں کوئی اُمید نہیں رکھنی چاہئے۔ شیوسینا نے کہا کہ کانگریس اور این سی پی نے گزشتہ پندرہ سال میں اس پر اتنا کیچڑ نہیں اُچھالا تھا جتنا کہ بی جے پی نے حال ہی میں اچھالا ہے۔

TOPPOPULARRECENT