Monday , November 20 2017
Home / سیاسیات / صدارتی امیدوار پر بی جے پی کا یکطرفہ فیصلہ اپوزیشن کیلئے ناقابل قبول

صدارتی امیدوار پر بی جے پی کا یکطرفہ فیصلہ اپوزیشن کیلئے ناقابل قبول

رام ناتھ کووند کے نام پر فیصلہ کے بعد سونیا گاندھی اور منموہن سنگھ کو اطلاع، کانگریس کا جمعرات کو فیصلہ: غلام نبی آزاد
نئی دہلی، 19 جون (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے بہار کے گورنر رام ناتھ کووند کو قومی جمہوری اتحاد کا صدارتی امیدوار بنانے کے بھارتیہ جنتا پارٹی کے فیصلے کو یکطرفہ قرار دیتے ہوئے آج کہا کہ اپوزیشن پارٹیاں 22 جون کو اس سلسلے میں فیصلہ لیں گی۔ کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ بی جے پی نے کانگریس صدر سونیا گاندھی اور سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ کو امیدوار کا نام طے کرنے کے بعد اس کی اطلاع دی ہے ۔ پارٹی کو ایسی توقع نہیں تھی۔ لگتا ہے کہ صرف خانہ پری کے لئے کانگریس لیڈروں کو اس کی اطلاع دی گئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ بی جے پی کا یکطرفہ فیصلہ ہے ، اگرچہ وہ اس طرح کا فیصلہ کرنے کے لئے آزاد ہے ۔ آزاد نے کہا کہ سونیا گاندھی کی صدارت میں 22 جون کو اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کا اجلاس ہو گا جس میں صدارتی امیدوار کے نام پر فیصلہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ گاندھی نے گزشتہ ماہ 18 سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں سے ظہرانہ کا انعقاد کرکے صدارتی امیدوار کے بارے میں تبادلہ خیال کیا تھااور یہ فیصلہ ہوا تھا کہ اس سلسلے میں تمام فریق مل کر فیصلہ کریں گے ۔ گاندھی کو بات چیت کے لئے ایک ذیلی گروپ قائم کرنے کے لئے باختیار کیا گیا تھا اور اس ذیلی گروپ کی بھی میٹنگ ہوئی ہے ۔ کانگریس لیڈر نے کہا کہ اس دوران بی جے پی اور حکومت نے صدارتی امیدوار کی بابت اپوزیشن سے بات چیت کے لئے وزراء کی تین رکنی کمیٹی تشکیل کی تھی تاکہ اتفاق رائے پیدا کیا جا سکے ۔ ان وزراء نے مختلف اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں سے رابطہ کیا۔محترمہ گاندھی سے بھی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ اور اطلاعات و نشریات کے وزیر وینکیا نائیڈو نے بات چیت کی تھی۔ امید تھی کہ وہ صدارتی امیدوار کے لئے چند نام پیش کریں گے لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا اور کہا کہ اس سلسلے میں فیصلہ لے کر انہیں اس کی اطلاع دیں گے ۔ آزاد نے کہا کہ امید تھی کہ امیدوار کا نام اعلان کرنے سے قبل اس کی اطلاع دی جائے گی تاکہ مختلف فریق اس پر تبادلہ خیال کر سکیں لیکن ایسا نہیں کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ اپوزیشن متحد ہے اور اجلاس میں اس سلسلے میں فیصلہ کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT