Wednesday , November 22 2017
Home / Top Stories / صدرجمہوریہ ، وزیراعظم ، صدر کانگریس اور مرکزی وزیر کی تشدد کی مذمت

صدرجمہوریہ ، وزیراعظم ، صدر کانگریس اور مرکزی وزیر کی تشدد کی مذمت

صدر ڈیرا جیل میں ، راجناتھ سنگھ کا خصوصی اجلاس، دہلی میں پولیس کے امتناعی احکام سرسہ میں مزید ہلاکتیں
نئی دہلی 25 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) صدرجمہوریہ ہند رامناتھ کووند نے آج ڈیرا سچا سودا سے متعلق تشدد اور عوامی جائیدادوں کو ڈیرے کے پیروؤں کی جانب سے نقصان پہنچانے کی مذمت کی اور عوام سے اپیل کی کہ امن برقرار رکھیں۔ وزیراعظم نریندر مودی نے آج رات سخت لب و لہجہ کے پیغام میں تشدد کی مذمت کرتے ہوئے اِسے انتہائی پریشان کن تشدد قرار دیا جو ہریانہ اور بعض دیگر ریاستوں میں خود ساختہ مذہبی رہنما گرمیت رام رحیم سنگھ کو عصمت ریزی مقدمے کا مجرم قرار دینے پر شروع ہوگیا ہے۔ اُنھوں نے عوام سے امن کی اپیل کی۔ صدر کانگریس سونیا گاندھی نے پنچ کلا اور ہریانہ کے دیگر علاقوں میں تشدد پر گہری تشویش ظاہر کرتے ہوئے امن کی اپیل کی۔ مرکزی وزیر راجیہ وردھن سنگھ راٹھور نے آج ہریانہ اور پنجاب میں تشدد کو انتہائی قابل مذمت قرار دیا۔ اُنھوں نے کہاکہ عوام کے ہجوم کے جائیدادوں اور ذرائع ابلاغ کے عملے پر حملے انتہائی قابل مذمت ہیں۔ وزیر مملکت برائے اطلاعات و نشریات راٹھور نے اپنا پیغام ٹوئٹر پر تحریر کیا۔ دریں اثناء مرکزی وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ نے کل صیانتی صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے ایک خصوصی اجلاس طلب کیا ہے جس میں وزارت داخلہ کے اعلیٰ سطحی عہدیدار، فوج اور سراغ رسانی محکموں کے عہدیدار شرکت کریں گے تاکہ شمالی ہند کی صورتحال کا جائزہ لیا جاسکے۔ راجناتھ سنگھ پہلے ہی ہریانہ، پنجاب، راجستھان اور یوپی کے چیف منسٹرس سے تبادلہ خیال کرچکے ہیں اور کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لئے مرکز کی جانب سے مدد کا تیقن دے چکے ہیں۔ مرکزی حکومت پہلے ہی تقریباً 20 ہزار نیم فوجی ارکان عملہ ہریانہ، پنجاب اور چندی گڑھ روانہ کرچکی ہے تاکہ مقامی انتظامیہ کی نظم و ضبط کی برقراری میں مدد کرے۔ رام رحیم سنگھ کے ہزاروں پیرو توڑ پھوڑ، گاڑیوں کو نذر آتش کرنے، ریلوے اسٹیشنوں اور عمارتوں کو نذر آتش کرنے میں مصروف رہے۔

جبکہ ایک خصوصی سی بی آئی عدالت نے رام رحیم سنگھ کو 2002 ء کے عصمت ریزی مقدمے میں مجرم قرار دیا۔ تشدد پنچ کلہ سے جہاں فیصلہ سنایا گیا تھا، ہریانہ، پنجاب اور دہلی کے علاقوں تک پھیل گیا۔ دہلی میں ایک بس اور ٹرین کو نذر آتش کردیا گیا۔ ڈیرا سچا سودا کے سربراہ کو مجرم قرار دینے کے بعد غازی آباد اور نوئیڈا میں سخت چوکسی اختیار کرلی گئی۔ جبکہ چندی گڑھ سے موصولہ اطلاع کے بموجب سخت چوکسی اور امتناعی احکام غازی آباد اور نوئیڈا میں نافذ کرنے کے بعد پولیس نے جو غازی آباد کی صورتحال پر نظر رکھی ہوئی تھی، 6 کمانڈوز کو جو رام رحیم سنگھ کے پیرو ہیں اسلحہ اور پٹرول کے ڈبے رکھنے کے الزام میں گرفتار کرلیا۔ پولیس کے بموجب سرسہ میں دو افراد ڈیرا سچا سودا تشدد کا آغاز ہونے کے بعد ہلاک ہوگئے جبکہ دیگر 7 سرسہ میں زخمی ہیں۔ یہاں ڈیرا سچا سودا کا ہیڈکوارٹر واقع ہے۔ حملے میں ٹی وی رپورٹر زخمی اور کیمرہ مین لاپتہ ہوگیا جبکہ ڈیرا سچا سودا کے صدر کو روہتک کی عارضی جیل منتقل کردیا گیا۔ نئی دہلی سے موصولہ اطلاع کے بموجب کانگریس نے آج چیف منسٹر ہریانہ ایم ایل کھتر کے استعفیٰ کا مطالبہ کیا۔ صدر کانگریس سونیا گاندھی نے ریاست میں تشدد پر گہری تشویش ظاہر کی۔ کانگریس صدر اور دیگر افراد نے اپنے ایک بیان میں کہاکہ تشدد میں بچے بھی ہلاک کئے گئے ہیں جو انتہائی افسوسناک ہے۔ صدر کانگریس نے اِس لئے عوام سے امن برقرار رکھنے کی اپیل کی ہے۔ دریں اثناء دہلی میں آتشزنی کے الزام میں تین افراد کو گرفتار کرلیا گیا جبکہ پولیس عہدیداروں کے بموجب صورتحال قابو میں ہے۔ ذرائع ابلاغ کی اسوسی ایشنوں نے صحافیوں پر حملوں کی مذمت کی اور مطالبہ کیاکہ صحافیوں کی حفاظت اور صیانت کے فوری اقدامات کئے جائیں تاکہ قانون کی حکمرانی کو یرغمال نہ بناسکے۔ دریں اثناء دہلی میں 8 ستمبر تک امتناعی احکام نافذ کردیئے گئے ہیں جن کے تحت 4 یا 4 سے زیادہ افراد ایک جگہ جمع نہیں ہوسکتے۔ ممبئی سے موصولہ اطلاع کے بموجب فلمی ستاروں نے عدالت کے فیصلے کی ستائش کرتے ہوئے کہاکہ بھڑک اُٹھنے والا تشدد ناقابل قبول ہے۔ اُنھوں نے عوام سے امن برقرار رکھنے کی اپیل کی۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT