Sunday , September 23 2018
Home / دنیا / صدر روس پوٹن کی جی 20 کانفرنس میں شرکت متوقع: آسٹریلیا

صدر روس پوٹن کی جی 20 کانفرنس میں شرکت متوقع: آسٹریلیا

سڈنی؍ماسکو۔ 12؍اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ آسٹریلیا کے وزیر خزانہ جوہاکی نے آج توثیق کی کہ صدر روس ولادیمیر پوٹن جی 20 قائدین کی چوٹی کانفرنس میں جو ماہ نومبر میں مقرر ہے، شرکت کریں گے، حالانکہ حالیہ مہینوں میں یوکرین میں روس کی کارروائی کے بارے میں اندیشے ظاہر کئے جارہے تھے۔ آسٹریلیا کی جانب سے صدر روس کی اعلیٰ اختیاری چوٹی کانفرنس

سڈنی؍ماسکو۔ 12؍اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ آسٹریلیا کے وزیر خزانہ جوہاکی نے آج توثیق کی کہ صدر روس ولادیمیر پوٹن جی 20 قائدین کی چوٹی کانفرنس میں جو ماہ نومبر میں مقرر ہے، شرکت کریں گے، حالانکہ حالیہ مہینوں میں یوکرین میں روس کی کارروائی کے بارے میں اندیشے ظاہر کئے جارہے تھے۔ آسٹریلیا کی جانب سے صدر روس کی اعلیٰ اختیاری چوٹی کانفرنس میں شرکت کی توثیق اُس وقت منظر عام پر آئی جب کہ صدر یوکرین پٹرو پوروشنکوف نے کہا کہ وہ آئندہ ہفتہ پوٹن سے ملاقات کریں گے۔ آسٹریلیائی براڈکاسٹنگ کارپوریشن پر آج صبح جوہاکی نے انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ آسٹریلیا کی جانب سے صدر روس کی جی 20 چوٹی کانفرنس میں شرکت کی توثیق کی جاتی ہے۔ وہ وزیر فینانس روس سے کل ہی بات کرچکے ہیں اور انھوں نے توثیق کی کہ صدر روس جی 20 چوٹی کانفرنس برسبین میں شرکت کیلئے روانہ ہونے والے ہیں۔

دیگر ارکان کی متفقہ رائے ہے کہ صدر پوٹن کو اس کانفرنس میں یقینی طور پر شرکت کرنا چاہئے تاکہ جامع اور بے باکانہ بات چیت ہوسکے۔ جوہاکی نے کہا کہ صدر امریکہ یقینا سخت نقطۂ نظر رکھتے ہیں، تاہم بارک اوباما چانسلر جرمنی اور دیگر قائدین کو بھی اس کانفرنس میں شرکت کرنی چاہئے تاکہ تمام مسائل پر آزادانہ بات چیت ہوسکے۔ دریں اثناء ماسکو سے موصولہ اطلاع کے بموجب صدر روس ولادیمیر پوٹن نے وزیر دفاع کو حکم دیا ہے کہ یوکرین کے سرحدی علاقہ میں تعینات ہزاروں روسی فوجیوں کا تخلیہ کروادیا جائے۔ اس سے قبل کہ سابق سویت یونین کے ملک کے ساتھ کمزور صلح کا معاہدہ مضبوط ہوسکے۔ صدر روس نے وزیر دفاع کو ذمہ داری سپرد کی ہے کہ روسی فوج کا تخلیہ شروع کروایا جائے اور انھیں روس میں ان کے مستقل فوجی اڈوں پر جلد از جلد واپس لایا جائے۔ کریملن نے کل شام کہا کہ اس حکم کا مطلب یہ ہے کہ 17 ہزار 600 فوجی جنھوں نے جنوبی روسٹوف میں فوجی مشقوں میں حصہ لیا تھا، اپنے مستقل فوجی اڈوں پر واپس آجائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT