Saturday , December 16 2017
Home / ہندوستان / صلاح الدین کے فرزند کی قیامگاہ پر این آئی اے کی تلاشی

صلاح الدین کے فرزند کی قیامگاہ پر این آئی اے کی تلاشی

موبائیل فونس ‘ لیپ ٹاپس اور کچھ اشتعال انگیز دستاویزات کی ضبطی ۔ تحقیقاتی ایجنسی کا دعوی
نئی دہلی 26 اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام ) قومی تحقیقاتی ایجنسی ( این آئی اے ) نے آج حزب المجاہدین کے سربراہ سید صلاح الدین کے فرزند سید شاہد یوسف کی قیامگاہ کی تلاشی لی اور یہاں سے کچھ فونس ‘ لیپ ٹاپس اور دوسرے دستاویزات ضبط کئے ۔ یہ کارروائی وسطی کشمیر کے بڈگام میں کی گئی ۔ عہدیداروں نے یہ بات بتائی ۔ شاہد کو این آئی اے نے 24 اکٹوبر کو گرفتار کیا تھا ۔ ان پر الزام ہے کہ وہ وادی کشمیر میں تخریب کار سرگرمیوں کیلئے بیرونی ممالک سے فنڈز حاصل کر رہے ہیں۔ فی الحال وہ این آئی اے کی سات روزہ تحویل میں ہیں۔ این آئی اے عہدیداروں نے کہا کہ ایجنسی کے اہلکاروں کی ایک ٹیم نے بڈگام ضلع میں شاہد کی قیامگاہ کی تلاشی لی ہے اور وہاں سے پانچ موبائیل فونس ‘ ایک لیپ ٹاپ اور کچھ اشتعال انگیز دستاویزات ضبط کئے ۔ این آئی اے کے بموجب 42 سالہ شاہد جموں و کشمیر حکومت کے محکمہ زراعت میں کام کرتے ہیں اور انہوں نے حزب المجاہدین کے کچھ کارکنوں کے نام بھی دئے ہیں جو اس تنظیم کیلئے فنڈز جمع کرنے کے کام میں ملوث ہیں۔ این آئی اے کا ادعا ہے کہ تفتیش کے دوران شاہد نے اعتراف کیا ہے کہ انہوں نے حزب المجاہدین کے کارکنوں سے اپنے والد کی ہدایت پر رقومات حاصل کی تھیں۔ سید صلاح الدین کا پورا نام محمد یوسف شاہ عرف سید صلاح الدین ہے اور وہ وادی میںدہشت گردانہ سرگرمیوں کو ہوا دے رہے ہیں۔ این آئی اے نے یہ ادعا بھی کیا کہ شاہد نے اپنے کچھ ساتھیوں کے ناموں کا بھی انکشاف کیا تھا جوحزب المجاہدین کے ساتھ سرگرم ہیں اور فنڈز جمع کر رہے ہیں ۔ کہا گیا ہے کہ یہ لوگ دوسرے ممالک میں فنڈز جمع کرتے ہوئے اسے ہندوستان کو منتقل کر رہے ہیں۔ یہ الزام بھی ہے کہ شاہد امریکہ سے کام کرنے والی ایک کمپنی کے ذریعہ اعجاز احمد بھٹ کی مدد سے فنڈز حاصل کر رہے تھے ۔ بھٹ بھی اس کیس کے ایک ملزم ہیں اور وہ مفرور ہیں۔ کہا جا رہا ہے کہ وہ سعودی عرب میں مقیم ہیں۔ ایجنسی نے الزام عائد کیا کہ شاہد بھٹ کے ان کئی ہندوستانی رابطوں میں شامل ہیںجن سے وہ فون پر بات کرتا تھا اور رقومات روانہ کرتا تھا ۔

 

 

TOPPOPULARRECENT