صنعتکاروں کے قرض معاف ہوسکتے ہیں تو کسانوں کے کیوں نہیں:کمل ناتھ

پارٹی کے اہم انتخابی وعدہ کی تکمیل کرنے کا عہد۔ تنقیدوں سے متاثر نہ ہونے کا عزم ‘ منتخب چیف منسٹر مدھیہ پردیش

بھوپال ۔15 دسمبر (سیاست ڈاٹ کام) مدھیہ پردیش کے نومنتخب وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے کسانوں کا قرض معاف کرنے کانگریس کے فیصلے پر سوال اٹھانے والوں پر نکتہ چینی کرتے ہوئے آج کہا کہ جب صنعت کاروں کے قرض معاف ہوسکتے ہیں تو کسانوں کے معاملے میں ایسا کیوں نہیں کیا جاسکتا ہے ۔مسٹر کمل ناتھ نے کہا کہ ریاست کی 70 فیصد لوگوں کی معیشت کا انحصار زراعت پر ہے ۔ یہ بھی سچ ہے کہ ہمارے یہاں کسان مقروض ہی پیدا ہوتا ہے اور اس کے بوجھ کے نیچے ہی زندگی گذارتا ہے ۔کسانوں اور زراعت کے شعبہ کی صورت حال بہتر ہونے سے ہی دیہی اور شہری علاقوں کی معیشت ٹھیک رہتی ہے اور بازار میں انہیں کی وجہ سے رونق رہتی ہے ۔انہوں نے کسانوں کے قرض معاف کرنے پارٹی کے فیصلے پر عمل کے اپنے عزم کا اظہار کیا۔کسانوں کے قرض معاف کرنے کے انتخابی وعدوں کے متعلق ریزرو بینک کے سابق گورنر رگھو رام راجن کے بیان پر سوال کے جواب میں کمل ناتھ نے کہا کہ وہ ایسی کسی بات سے گمراہ ہونے والے نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اے سی کمروں میں بیٹھ کر باتیں کرنے والے کسانوں کے درد کو نہیں سمجھ سکتے ۔انہوں نے کہا کہ جب صنعت کاروں کے بڑے قرضے معاف کردیئے جاتے ہیں تو کسانوں کے قرض معاف کیوں نہیں ہوسکتے ۔ مدھیہ پردیش انتخابات کے دوران کانگریس نے اپنے ‘انتخابی منشور’ میں کسانوں کے قرض معاف کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ اب کانگریس کی حکومت بننے پر سبھی کی نگاہیں کسانوں کے قرض معاف کرنے سے متعلق وعدوں کے تکمیل پر لگی ہوئی ہیں۔ ریاستی کانگریس صدر کمل ناتھ نومنتخب کانگریس ارکان اسمبلی کی رضامندی سے لیڈر منتخب ہوئے ہیں۔ اس کے بعد انہو ںنے گورنر کے سامنے حکومت تشکیل دینے کا دعوی پیش کیا اور گورنر نے مسٹر کمل ناتھ کو وزیراعلی منتخب کرکے حکومت بنانے دعوت دی۔ کمل ناتھ پیر کو دوپہر میں لال پریڈ میدان میں منعقد ہونے والی کی تقریب میں وزیراعلی کے عہدے کا حلف لیں گے ۔ اس موقع پر پارٹی صدر راہل گاندھی ، سینئر پارٹی لیڈر اور مختلف پارٹیوں کے سینئر لیڈروں کے علاوہ اہم صنعت کاروں کے بھی موجود رہنے کے امکانات ہیں۔
کمل ناتھ چھند واڑہ میں کسی حلقے سے
اسمبلی کیلئے انتخاب لڑیں گے
بھوپال 15 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) مدھیہ پردیش کے منتخب چیف منسٹر کمل ناتھ نے کہا کہ وہ چھند واڑہ میں کسی اسمبلی حلقہ سے مقابلہ کرینگے۔ تاہم انہوں نے ضلع میں کسی مخصوص نشست کے تعلق سے فیصلہ نہیں کیا ہے ۔ قوانین کے مطابق کمل ناتھ کو وزارتی عہدہ سنبھالنے کے چھ ماہ کے اندر اسمبلی کیلئے منتخب ہونا پڑیگا ۔ کمل ناتھ چھند واڑہ کے رکن لوک سبھا ہیں۔ ضلع میں جملہ سات نشستیں ہیں اور ان میں چار نشستیں درج فہرست ذاتوں اور قبائل کیلئے محفوظ ہیں اور مسٹر کمل ناتھ وہاں سے انتخاب نہیں لڑسکتے ۔

کمل ناتھ کی حلف برداری کیلئے ممتا بنرجی و مایاوتی کو بھی دعوت
بھوپال 15 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے کئی سیاسی جماعتوں کے قائدین کو مدھیہ پردیش میں چیف منسٹر کی حیثیت سے کمل ناتھ کی حلف برداری کیلئے مدعو کیا ہے ۔ وہ 17 ڈسمبر کو حلف لیں گے ۔ ذرائع کے بموجب تقریب حلف برداری میں یو پی اے صدر نشین سونیا گاندھی ‘ کانگریس صدر سونیا گاندھی کے علاوہ چیف منسٹر مغربی بنگال ممتابنرجی ‘ چیف منسٹر اے پی چندرا بابو نائیڈو ‘ بی ایس پی سربراہ مایاوتی ‘ ایس پی سربراہ اکھیلیش یادو اور کانگریس اقتدار والی ریاستوں کے چیف منسٹروں اور اعلی صنعتکاروں کو بھی مدعو کیا گیا ہے ۔ ذرائع کے بموجب 17 ڈسمبر کو کمل ناتھ تنہا حلف لیں گے اور پھر بعد میں کابینہ میں توسیع کی جائے گی ۔ تقریب حلف برداری کی تیاریوں کا آغاز کردیا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT