Tuesday , December 12 2017
Home / Top Stories / صومالیہ میں کار بم حملہ، سابق وزیردفاع ہلاک

صومالیہ میں کار بم حملہ، سابق وزیردفاع ہلاک

کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی، ڈرون طیارہ حادثہ کا شکار
موغادیشو۔ 15 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) صومالیہ کے سابق وزیردفاع ایک کار بم حملہ میں آج ہلاک ہوگئے۔ یہ دارالحکومت موغادیشو میں حملوں کے سلسلہ کا تازہ ترین حملہ تھا۔ فوری طور پر حملہ کی ذمہ داری کسی بھی گروپ نے قبول نہیں کی۔ وسطی کے 4 ضلع میں القاعدہ سے مربوط الشباب شورش پسند اسی قسم کے بم حملہ ماضی میں بھی کرتے رہے ہیں۔ سابق وزیردفاع محی الدین محمد جو 2008ء میں ملک کے وزیردفاع تھے، ایک دھماکو آلہ سے جو ان کی کار کے ڈرائیور کی نشست کے نیچے نصب کیا گیا تھا، یہ دھماکہ کیا گیا۔ پولیس عہدیدار ابراہیم محمد نے اطلاع دی کہ حملہ میں ایک شخص زخمی بھی ہوگیا ہے۔ الشباب بین الاقوامی حمایت یافتہ حکومت کو موغادیشو میں اقتدار سے بیدخل کرنا چاہتی ہے لیکن اسے افریقی یونین کے 22 ہزار فوجیوں کا تحفظ حاصل ہے۔ ایک عینی گواہ نے کہا کہ اس نے کے 4 علاقہ کے قریب ایک دھماکہ سنا اور ایک نعش دیکھی۔ وہ بری طرح زخمی تھا۔ اس کے تمام جسم پر خون پھیلا ہوا تھا۔ دریں اثناء ایک فوجی ڈرون مبینہ طور پر جنوبی صومالیہ کے ایک دورافتادہ علاقہ میں حادثہ کا شکار ہوگیا تھا۔ مقامی شہریوں کے بموجب تباہ شدہ یہ ڈرون طیارہ الشباب کے جنگجوؤں کے قبضہ میں ہے۔ انہوں نے اسے پہاڑوں پر حادثہ کا شکار ہونے والے چھوٹے طیارہ کی طرح لوٹ لیا ہے۔ عبداللہ محی الدین ایک دیہاتی شخص نے کہا کہ الشباب کے جنگجو ایک گاڑی میں ڈرون طیارہ کا ملبہ بھر کر اسے منتقل کرتے دیکھے گئے ہیں۔ مبینہ طور پر امریکی ڈرون حملوں میں الشباب کے کئی کمانڈرس ہلاک ہوچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT