Saturday , December 15 2018

ضرورت مندوں کی مدد میں دینی و دنیوی راحت

کشن باغ کے فیاض کے لیے فیض عام ٹرسٹ کی جانب سے مکان کی تعمیر ، جناب زاہد علی خاں کے ہاتھوں حوالگی

کشن باغ کے فیاض کے لیے فیض عام ٹرسٹ کی جانب سے مکان کی تعمیر ، جناب زاہد علی خاں کے ہاتھوں حوالگی
حیدرآباد ۔ 9 ۔ مارچ : ( نمائندہ خصوصی ) : اگر کسی غریب اور مصیبت زدہ خاندان کی مدد کی جائے تو اس کی خوشیوں کا کوئی ٹھکانہ نہیں رہتا اور خاص طور پر کسی غریب کے بوسیدہ گھر کی دیواریں تعمیر کرتے ہوئے اس پر مضبوط چھت نصب کی جائے تو اس کی خوشیاں دیکھنے سے تعلق رکھتی ہیں ۔ اور وہ لوگ خوش نصیب ہیں جنہیں اپنے پریشان حال بھائیوں کے چہروں پر خوشیاں واپس لانے کا موقع ملتا ہے ۔ یہ ایسی نیکی ہے جو ہر کسی کے حصہ میں نہیں آتی ۔ اسی طرح مصیبت زدہ اور حالات کے ستائے انسانوں کی مدد کو سب سے بڑی عبادت سمجھتے ہوئے انسانیت کا مظاہرہ کرنے والوں کا شمار بھی ایسے ہی لوگوں میں ہوتا ہے ۔ خوشی کی بات یہ ہے کہ ہمارے شہر حیدرآباد فرخندہ بنیاد میں ایسے لوگوں کی بھی کمی نہیں جو یتیموں و یسیروں کے سر پر شفقت کا ہاتھ رکھتے ہیں ۔ ان کے چہروں پر مسکراہٹیں واپس لانے کے لیے ہر طرح سے ان کا خیال رکھتے ہیں ۔ اللہ تعالیٰ نے اس طرح کے مواقع ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں ، فیض عام ٹرسٹ کے سکریٹری جناب افتخار حسین اور عنایت ملت ویلفیر چیارٹیبل ٹرسٹ کے جناب خدا داد خاں کو عطا کئے ہیں اور سب سے اچھی بات یہ ہے کہ ملی ہمدردی کا جذبہ رکھنے والے ہمدردان ملت نے ہمیشہ ان شخصیتوں اور اداروں کے ذریعہ ملت کے پریشان حال لوگوں کی بھر پور مدد کی ہے ۔ قارئین آپ کو یاد ہوگا کہ مئی 2014 کے دوران عرش محل کشن باغ میں اشرار کے ہاتھوں غریب مسلمانوں کی زبردست تباہی ہوئی تھی ۔ بی ایس ایف کی فائرنگ میں 3 نوجوان جاں بحق ہوئے تھے ۔ 8 گھروں کو نذر آتش کیا گیا تھا ۔ بے شمار افراد زخمی ہوئے تھے ۔ ان مصیبت زدوں کی مدد کے لیے ایڈیٹر سیاست کی تحریک پر فیض عام ٹرسٹ اور عنایت ملت ویلفیر چیارٹیبل ٹرسٹ نے صرف ایک دن میں 6.40 لاکھ روپئے متاثرین میں تقسیم کئے تھے ۔ فیض عام ٹرسٹ نے اشرار کے حملہ میں زخمی افراد کو فی کس 10 ہزار بی ایس ایف کی فائرنگ کا نشانہ بن کر زخمی ہوئے 7 افراد کے لیے فی کس 20 ہزار روپئے اور جن 8 افراد کے مکانات نذر آتش کئے گئے تھے ان میں فی کس 10 ہزار روپئے تقسیم کئے تھے ۔ ساتھ ہی پروین نامی ایک خاتون اور دیگر کی دکانات دوبارہ شروع کرنے میں مدد کی تھی ۔ اس مرتبہ فیض عام ٹرسٹ نے فیاض نامی شخص کے مکان کی تعمیر میں تعاون کیا ۔ 50 ہزار روپئے کے مصارف سے اس کے لیے پختہ کمرہ تعمیر کروایا ۔ جناب زاہد علی خاں نے سکریٹری فیض عام ٹرسٹ کی موجودگی میں نیا تعمیر کردہ کمرہ فیاض اور ان کی اہلیہ کے حوالے کیا ۔ 3 بچوں کے باپ فیاض نے اس بات کی درخواست کی تھی کہ کم از کم ان کے لیے ایک پختہ کمرہ تعمیر کیا جائے تاکہ ان کے بیوی بچوں کو رہنے میں سہولت ہوسکے ۔ اس موقع پر جناب افتخار حسین نے فیاض کے تینوں بچوں کے تعلیمی اخراجات بشمول اسکول فیس فیض عام ٹرسٹ کی طرف سے برداشت کرنے کا اعلان کیا اور کہا کہ سیاست ملت فنڈ کے ساتھ مل کر فیض عام ٹرسٹ صرف حیدرآباد میں ہی نہیں بلکہ فسادات سے متاثرہ یو پی کے مظفر نگر ، طوفان میں تباہ کشمیر اور دہلی کے غریب مسلمانوں کے لیے بھی فلاحی کام کررہا ہے ۔ جناب زاہد علی خاں نے فیاض کو نیا تعمیر شدہ کمرہ حوالے کرتے ہوئے بچوں کو اسکول میں داخلہ دلانے کا مشورہ دیا اور کہا کہ غربت ، بیماریوں ، بیروزگاری اور تعصب و فرقہ پرستی کا مقابلہ صرف حصول علم کے ذریعہ ہی کیا جاسکتا ہے ۔ انہوں نے وہاں موجود مرد و خواتین سے یہ بھی کہا کہ وہ چھوٹے پیمانے پر ہی صحیح تجارت ضرور کریں کیوں کہ تجارت میں برکت ہی برکت ہے اور یہ ہمارے نبی کریم ؐ کی سنت ہے ۔ اس موقع پر مقامی افراد اور علی الگتمی بھی موجود تھے ۔۔

TOPPOPULARRECENT