Sunday , June 24 2018
Home / اضلاع کی خبریں / ضلع عادل آباد میں پُرامن انتخابات کیلئے وسیع تر انتظامات

ضلع عادل آباد میں پُرامن انتخابات کیلئے وسیع تر انتظامات

عادل آباد۔7مارچ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ضلع عادل آبادکی فہرست رائے دہندگان کو اردو میں طباعت کرانے ضلع کلکٹر مسٹر احمد بابو ریاستی الیکشن کمیشن سے نمائندگی کرنے سے اتفاق کرلیا جبکہ یہ تجویز نمائندہ ’’سیاست‘‘ محبوب خان نے مستقر عادل آباد کے کلٹریٹ کانفرنس ہال میں میڈیا نمائندوں سے مخاطب کے دوران پیش کی۔ قبل از ضلع کلکٹر حالیہ منعقد

عادل آباد۔7مارچ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ضلع عادل آبادکی فہرست رائے دہندگان کو اردو میں طباعت کرانے ضلع کلکٹر مسٹر احمد بابو ریاستی الیکشن کمیشن سے نمائندگی کرنے سے اتفاق کرلیا جبکہ یہ تجویز نمائندہ ’’سیاست‘‘ محبوب خان نے مستقر عادل آباد کے کلٹریٹ کانفرنس ہال میں میڈیا نمائندوں سے مخاطب کے دوران پیش کی۔ قبل از ضلع کلکٹر حالیہ منعقد ہونے والے بلدیات‘ اسمبلی اور پارلیمانی انتخابات کے پیش نظر میڈیا کا ایک اہم اجلاسطلب کیا جس میں جوائنٹ کلکٹر مسٹر لکشمی کانتم ضلع ایس پی مسٹر جی بھوپال کے علاوہ دیگر عہدیدار بھی موجود تھے ۔ضلع کلکٹر نے کہا کہ بلدی وارڈز میں منعقد ہونے والے رائے دہی کی گنتی مجالس بلدیات دفاتر میں کی جائے گی جبکہ ضلع کے اس اسمبلی اورپارلیمانی حلقہ کے ووٹوں کی گنتی کا کام مستقر عادل آباد کے ٹرایبل ریسیڈنشیل اسکول میں کیا جائے گا ۔ حق رائے دہی میں استعمال کردہ الکٹرانک ووٹنگ مشینوں کو مستقر کے سنجے گاندھی پالی ٹیکنک کالج کے اسٹرانگ روم میں محفوظ کئے جائیں گے ۔

انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کو انتخابی مصارف پیش کرنے کی خاطر بینک میں اکاؤنٹ کھولنے کو لازمی قرار دیتے ہوئے پُرزور پابندی کے ساتھ انتخابی مصارف پیش کرنے کی ہدایت دی گئی ۔ ڈسمبر اور جنوری ماہ کے دوران ضلع میں دو لاکھ دس ہزار ووٹرس کے جدید ناموں کی شمولیت کا تذکرہ کرتے ہوئے جاریہ ماہ کی 9تاریخ کو فہرست رائے دہی میں اپنا نام اندراج کرانے کا آخری موقع دیا گیا ہے جس سے استفادہ حاصل کرنے کی خواہش کی ۔جبکہ بلدیات انتخابات کی فہرست رائے دہی دو مارچ کو مکمل کرلی گئی ہے۔ ضلع میں تین لاکھ پلاسٹک شناختی کارڈ فراہم کئے جارہے ہیں جو حالیہ فہرست رائے دہی میں نام اندراج کرنے والے افراد کے ضلع کے ہر می سیوا سنٹر پر فراہم ہوسکیں گے ۔ فرضی یا انتقال کردہ افراد کے ناموں کا فہرست رائے دہی سے خارج کرنے کی بھی سہولت جاریہ ماہ کی 20تاریخ تک برقرار رکھی گئی ہے ۔ ضلع کے ہر منڈل میں ایک مجسٹریٹ کی سرپرستی میں ایک سب انسپکٹر پولیس اور چھ پولیس جوانوں پر مشتمل ایک ویڈیو گرافر کے ہمراہ ٹیم گشت کرتے ہوئے انتخابی تشہیر پر نظر رکھے گی جس کے تحت انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کو یقینی بنایا جائے گا ۔ ضلع کا رقبہ جغفرافیائی اعتبار سے کافی طویل اور وسیع ہونے کے پیش نظر فلائنگ اسکواڈکو بھی ایک ویڈیو گرافر کے ذریعہ متحرک کیا جارہاہے ۔ ’’ پیڈ نیوز‘‘ پر کڑی نظر رکھنے کی غریض سرکاری سطح پر ایک کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا

جس میں ایک سینئر صحافی مسٹر ہرپال سنگھ کو شامل کیا جارہاہے ۔ عام انتخابات کے پیش نظر دفتر ضلع کلکٹریٹ میں بی ایس این ایل کے تعاون سے ٹول فری چار عدد فون رکھنے کے علاوہ ضلع کے ہر اسمبلی حلقہ میں ایک فون رکھا جارہا ہے جس سے حاصل ہونے والی شکایتوں کو آن لائن محفوظ کیا جائے گا تاکہ اس کی سماعت ریاستی و مرکزی الیکشن کمیشن بھی کرسکے ۔ انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کو اپنے طور پر انتخابی مصارف پیش کرنے ہوں گے جبکہ پارٹی کی سطح پر انتخابی مصارف پیش کرنے کی ذمہ داری سیاسی پارٹی ذمہ داروں پر عائد ہوگی۔ضلع ایس پی مسٹر جی بھوپال نے کہاکہ گذشتہ تین دن کے دوران ضلع میں 32کیس غیرقانونی شراب منتقل کرنے کے درج کئے گئے ہیںجبکہ کاغذنگر کے ایک موضع میں دیسیشراب بنانے کے کارخانہ پر دھاوا کرتے ہوئے گڑمبہ کے لئے استعمال کی جانے والی 26کنٹل خام اشیاء کو ضبطکرلیا گیا ۔ بیلم پلی میں غیر قانونی طور پر منتقل کرنے والے 25لاکھ روپیوں کو ضبط کرلیا گیا ۔ گذشتہ 20سال سے ضلع میں ماؤسٹوں کے اثر کے باوجود ماؤسٹوں کی تحریک کو مدنظر رکھتے ہوئے عام انتخابات میں ایک جامعہ منصوبہ بنایا گیا ہے ۔ انتخابات میںزائد از 20ہزار پولیس جوانوں کومتحرک کرنے کے علاوہ مرکز سے 9عدد پیراملٹری فورس کو طلب کیا گیا جس میں چھ کمپنیاں اپنی موجودگی کی رپورٹ کرچکے ہیں ۔ جرائم پیشہ افراد کا شخصی مچلکہ 50ہزار روپیوں کے تحت حاصل کیا جارہا ہے ۔ جرائم پیشہ افراد کسی بھی غیرقانونی کارروائی میں ملوث ہونے پر ان سے 50ہزار روپئے حاصل کرنے کے علاوہ ان پر کیس درج کرنے کا بھی انتباہ دیا گیا ‘ تقریباً دو گھنٹے تک میڈیا کا اجلاس جاری تھا ۔

TOPPOPULARRECENT