Saturday , December 16 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ضلع نظام آباد میں آبی وسائل سنگین ہونے کا اندیشہ

ضلع نظام آباد میں آبی وسائل سنگین ہونے کا اندیشہ

نظام آباد:5؍ ڈسمبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ضلع نظام آباد میںناکافی بارش کی وجہ سے زیر زمین میں سطح آب میں قابل لحاظ کمی کے باعث ضلع میں موسم گرما سے قبل پانی کی زبردست قلت محسوس ہورہی ہے ۔ ضلع انتظامیہ کی جانب سے قبل ازمتبادل انتظامات نہ کرنے کی صورت میں پانی کا سنگین مسئلہ پیدا ہونے کے امکانات ہیں۔ ماہرین بورویلس کی کھدوائی پر امتناع عائد کرنے اور موجودہ ذخیرہ کو منصوبہ بند طریقہ سے استعمال کرنے کی رائے پیش کررہے ہیںگذشتہ دو سال سے ضلع نظام آباد میں ناکافی بارش کی وجہ سے زیر زمین میں پانی کی سطح میں کمی ہوتی جارہی ہے اوراہم ذخیرہ کے علاوہ تالابوں اور کنٹوں میں پانی نہ ہونے کی وجہ سے زیر زمین میں پانی کی سطح میں تیزی کے ساتھ کمی ہوتی جارہی ہے۔ ماہ نومبر تک ضلع میں 979 ملی میٹر بارش کا ہونا ناگزیر تھا لیکن ضلع میں صرف 494 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی۔ ضلع میں 49.5 بارش کم ریکارڈ کی گئی۔ جس کی وجہ سے زیر زمین میں پانی کی سطح میں تیزی کے ساتھ کمی ہوتی جارہی ہے۔ جس کی وجہ سے ضلع میں خشک سالی پیدا ہورہی ہے۔ گذشتہ سال ماہ نومبر میں زیر زمین میں سطح آب 10523 میٹر تھی۔ اس سال نومبر میں زیر زمین میں سطح آب 16.96 میٹر ہوگئی ہے۔ ایک سال کے دوران گذشتہ سال سے بھی 6.73 میٹر کی کمی ہوئی ہے اور آنے والے دنوں میں مزید کمی ہونے کے امکانات پیدا ہورہے ہیں نظام آباد زیر زمین میں سطح آب میں تیزی کے ساتھ کمی ہوتی جارہی ہے۔ریونیو ڈیویژن نظام آباد کے علاوہ آرمور، ویلپور، جکران پلی، بالکنڈہ، موڑتا ڑ، نندی پیٹھ، ماکلور منڈلوں میں بورویلس کی تعداد قابل لحاظ ہونے کی وجہ سے اس کااثر ہورہا ہے۔ جکران پلی میں گذشتہ سال زیر زمین میں سطح آب 12.76 تھی تو اس سال 21.94 میٹر ہے۔ موڑتاڑ منڈل میں گذشتہ سال 14.72 میٹر تھا تو اس سال 27.23 میٹر گہرائی کو پہنچ گیا۔ آرمور منڈل کے پرکٹ میں 10.20 میٹر تھا تو اس سال 17.07 میٹرہے۔ ویلپور منڈل کے انکسا پور میں گذشتہ سال 5.82 میٹر گہرائی پر تھا تو اس سال تیزی کے ساتھ کمی ہوتے ہوئے 14.032 میٹر گہرائی کو پانی پہنچ گیا۔ اسی طرح کاماریڈی ریونیو ڈیویژن میں گذشتہ سال 14.44میٹر گہرائی میں زیر زمین میں پانی تھا تو اس سال نومبر تک 20.64 میٹر گہرائی کو پانی پہنچ گیا ہے۔ کاماریڈی ڈیویژن کے بھکنور منڈل میں پانی کی سطح میں سب سے زیادہ کمی ہوئی ہے۔ پانی کی کمی کے باعث زرعی عہدیدار کاشت نہ کرنے کی خواہش کی جارہی ہے۔ ربیع کے سیزن میں کاشت نہ کرنے کی خواہش کررہے ہیں جبکہ ماہرین مارچ تک بارش کی پیش قیاسی ظاہر کررہے ہیں۔ جب تک بورویلس کی کھدوائی پر امتناع عائد کرنے ضلع کی عوام کو پینے کا پانی فراہم کیلئے قبل از منصوبہ بندی کرتے ہوئے پانی کی قلت کو دور کرنے کی خواہش کررہے ہیں اور بارش نہ ہونے کی وجہ سے پینے کے پانی کی قلت پیدا ہورہی ہے۔ اس قلت کو دور کرنے کیلئے متبادل انتظامات کرتے ہوئے پانی فراہم کرنے کی خواہش کی جارہی ہے۔ ضلع نظام آباد کے بیشتر دیہاتوں میں ابھی سے پانی کی قلت پیدا ہورہی ہے اسے جنگی خطوط پر نمٹتے ہوئے عوام کو آبی سہولتیں فراہم کرنے کا دیہاتیوں کی جانب سے مطالبہ کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT