Monday , December 11 2017
Home / ہندوستان / طالب علم کی خودکشی پر بی جے پی میں سرکشی

طالب علم کی خودکشی پر بی جے پی میں سرکشی

مرکزی وزراء کے خلاف دلت لیڈر کی تنقید
نئی دہلی۔ 21 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی کو پشیماں کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیر اور سینئر پارٹی لیڈر سنجے پاسوان نے آج یہ الزام عائد کیا کہ ایک دلت طالب علم کے مسئلہ پر مرکزی وزراء سمرتی ایرانی اور بنڈارو دتاتریہ ’’سنگین بے حسی‘‘ کا مظاہرہ کررہے ہیں جس کے نتیجہ میں اس طالب علم نے خودکشی کرلی۔ انہوں نے اس خصوص میں وزیراعظم نریندر مودی سے بیان دینے کا مطالبہ کیا۔ سنجے پاسوان جوکہ بی جے پی قومی عاملہ کے رکن اور ایس سی سیل کے سابق صدر ہیں، کہا کہ حکومت، حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی کے وائس چانسلر کو برطرف اور معاملہ کی سی بی آئی تحقیقات کرواسکتی ہے۔ یہ الزام عائد کرتے ہوئے کہ روہت ویملا کے ساتھ مجرمانہ طرز عمل اور سنگین بے حسی کا مظاہرہ کیا گیا، پاسوان نے وزیر فروغ انسانی وسائل کو موسومہ ایک مکتوب میں طالب علم کو قوم دشمن قرار دینے پر بنڈارو دتاتریہ کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ اس معاملے کو غلط طریقہ سے نمٹنے کیلئے سمرتی ایرانی بھی ذمہ دار ہیں۔ ایک ایسے وقت پارٹی کے دلت لیڈر کی جانب سے بے باک تبصروں سے بی جے پی کو پشیمانی اُٹھانی پڑسکتی ہے جب اپوزیشن جماعتیں ، بی جے پی کو مخالف دلت ثابت کرنے کی کوشش میں ہے۔ سنجے پاسوان جوکہ اٹل بہاری واجپائی کی زیرقیادت این ڈی اے حکومت میں مملکتی وزیر رہ چکے ہیں، دلتوں کے ساتھ ناانصافی کے خلاف آواز بلند کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT