Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / طلبہ نے تحقیقاتی پیانل رپورٹ کی کاپیاں نذرآتش کردیں

طلبہ نے تحقیقاتی پیانل رپورٹ کی کاپیاں نذرآتش کردیں

روہت ویمولہ کی موت
حیدرآباد۔ 24 اگست (پی ٹی آئی) حیدرآباد یونیورسٹی طلبہ کے ایک گروپ نے آج روہت ویمولہ کی موت کی تحقیقاتی رپورٹ کی نقولات نذرآتش کیں۔ پیانل نے اس رپورٹ میں کہا تھا کہ دلت اسکالر روہت ویمولہ کی خودکشی کیلئے یونیورسٹی حکام ذمہ دار نہیں ہیں۔ ویمولہ کی خودکشی کے بعد سابق الہ آباد ہائیکورٹ جج اے کے روپن وال کی زیرنگرانی ایک رکنی جوڈیشیل کمیشن قائم کیا گیا تھا، اس کمیشن نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ ویمولہ مختلف ذاتی وجوہات کی بناء پریشان اور ناخوش تھا۔ رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ ویمولہ دلت نہیں تھا۔ طلبہ نے اس رپورٹ کو سیاسی محرکات پر مبنی قرار دیا ہے اور آج شام احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ پروفیسر کے لکشمی نارائنا نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کمیشن کے قیام کا بنیادی مقصد یہ تھا کہ اُن حالات کی تحقیقات کرے جس کے نتیجہ میں ویمولہ کی موت واقع ہوئی، لیکن کمیشن اس بنیادی کام کی انجام دہی میں ناکام رہا۔ واضح رہے کہ روہت ویمولہ نے 17 جنوری 2016ء کو ہاسٹل کے کمرہ میں پھانسی لے کر خودکشی کرلی۔ اس سے پہلے یونیورسٹی حکام نے ویمولہ کے خلاف تادیبی کارروائی بھی کی تھی۔

TOPPOPULARRECENT