Thursday , June 21 2018
Home / سیاسیات / طوفانی سرمائی اجلاس کا اختتام،اصلاحی ایجنڈے میں رکاوٹ

طوفانی سرمائی اجلاس کا اختتام،اصلاحی ایجنڈے میں رکاوٹ

نئی دہلی ۔ 23 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) پارلیمنٹ کا سرمائی اجلاس جس میں طوفانی احتجاج اور کچھ سرکاری کام کاج کا امتزاج دیکھنے میں آیا، آج اختتام پذیر ہوا جبکہ کئی قانون سازیوں کو منظوری دی گئی لیکن بعض کلیدی اصلاحی بل جیسے انشورنس اور کوئلہ بلاک الاٹمنٹ سے متعلق بل بدستور معرض التواء ہیں۔ ایک ماہ طویل سیشن کے دوران لوک سبھا نے 22 نشستوں

نئی دہلی ۔ 23 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) پارلیمنٹ کا سرمائی اجلاس جس میں طوفانی احتجاج اور کچھ سرکاری کام کاج کا امتزاج دیکھنے میں آیا، آج اختتام پذیر ہوا جبکہ کئی قانون سازیوں کو منظوری دی گئی لیکن بعض کلیدی اصلاحی بل جیسے انشورنس اور کوئلہ بلاک الاٹمنٹ سے متعلق بل بدستور معرض التواء ہیں۔ ایک ماہ طویل سیشن کے دوران لوک سبھا نے 22 نشستوں میں ریکارڈ تعداد میں 18 قانون سازیاں منظور کئے جس میں کوئلہ کانوں کے الاٹمنٹ سے متعلق ترمیمی بل اور لیبر قوانین شامل ہیں۔ اس ایوان میں لگ بھگ تین گھنٹے التواء اور احتجاج و شور و غل کی بناء کارروائی درہم برہم ہونے سے ضائع ہوئے۔ راجیہ سبھا جہاں تبدیلی مذہب کے مسئلہ پر زیادہ تر طوفان دیکھنے میں آیا، وہاں 22 نشستوں کے دوران 12 بلوں کو منظوری دی جاسکی جبکہ مختلف مسائل پر گڑبڑ کے سبب 62 گھنٹے برباد ہوئے۔ یہ ایوان کی کارروائی زائد از 76 گھنٹے طلب کی گئی جبکہ زائد از 62 گھنٹے مختلف مسائل سے ضائع ہوئے، جن میں حیدرآباد میں راجیو گاندھی ایرپورٹ کے نام کی تبدیلی، ایک مرکزی وزیر کی اہانت آمیز تقریر اور کالا دھن کو ملک میں واپس لانے کے مسائل شامل ہیں۔ اس گڑبڑ کے سبب حکومت کے اصلاحات ایجنڈے کو بڑی رکاوٹ پیش آئی جبکہ انشورنس قوانین (ترمیم) بل 2008 ء کئی روز تک غور و خوض کیلئے ایجنڈہ پر رکھے جانے کے باوجود بدستور تصفیہ طلب ہے۔ یہ بل انشورنس میں بیرونی سرمایہ کی حد 26 فیصد سے بڑھاکر 49 فیصد کردینے سے متعلق ہے

TOPPOPULARRECENT