Wednesday , December 19 2018

عازمین حج کے کوٹہ میں اضافہ اور حیدرآبادی رباط کا مسئلہ حل کیا جائے

قومی حج کانفرنس میں اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور کا اصرار

قومی حج کانفرنس میں اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور کا اصرار
حیدرآباد ۔23 ۔ جون ۔ (سیاست نیوز) مرکزی وزارت خارجہ کی جانب سے آج نئی دہلی میں منعقدہ 30 ویں سالانہ آل انڈیا قومی حج کانفرنس میں ہندوستان کے حج کوٹہ میں اضافہ اور حجاج کرام کو سہولتوں کی فراہمی کے بارے میں مختلف گوشوں سے مرکزی حکومت کو نمائندگی کی گئی۔ اس کانفرنس میں مختلف ریاستوںکی حج کمیٹی کے صدور ، اگزیکیٹیو آفیسرس ، مسلم ارکان پارلیمنٹ اور سنٹرل حج کمیٹی کے اراکین و عہدیداروں نے شرکت کی۔ مرکزی وزیر خارجہ سشما سوراج نے مہمان خصوصی کی حیثیت سے شرکت کی ۔ آندھراپردیش حج کمیٹی کی جانب سے اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور اور اگزیکیٹیو آفیسر ایم اے حمید نے اجلاس میں شرکت کی اور آندھراپردیش کے عازمین حج کے کوٹہ میں اضافہ اور مکہ مکرمہ کی حیدرآبادی رباط میں قیام سے متعلق تنازعہ کی جلد یکسوئی کی درخواست کی۔ مسلم ارکان پارلیمنٹ میں تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے دو ارکان پارلیمنٹ نے شرکت کی۔ صدرنشین سنٹرل حج کمیٹی قیصر شمیم چیف اگزیکیٹیو آفیسر عطاء الرحمن، سعودی عرب میں ہندوستانی سفیر حامد علی راؤ، کونسل جنرل جدہ این مبارک، کونسل حج جدہ نور محمدکے علاوہ وزارت خارجہ کے سکریٹری و دیگر عہدیدار بھی کانفرنس میں شریک رہے۔ کانفرنس میں تمام حج کمیٹیوں کو اطلاع دی گئی کہ حج 2014 ء میں حجاج کرام کیلئے مدینہ منورہ میں قیام کے دوران طعام کا انتظام کیا جائے گا ۔ اس سے قبل حجاج کرام کو ہوٹلوں میں پکوان کی اجازت دی گئی تھی ۔ عہدیداروں نے بتایا کہ ایک وقت کا کھانا 7.5 ریال میں فراہم کیا جائے گا اور یہ رقم حجاج کرام کو دی جانے والی 2100 ریال میں سے منہا کی جائے گی ۔ صدرنشین سنٹرل حج کمیٹی قیصر شمیم نے حکومت ہند سے درخواست کی کہ عازمین حج کے کوٹہ میں اضافہ کیا جائے ۔ گزشتہ سال عازمین حج کا کوٹہ ایک لاکھ 21000 تھا جو جاریہ سال گھٹ ایک لاکھ 20000 ہوچکا ہے۔ انہوں نے تجویز پیش کی کہ خانگی ٹور آپریٹرس کے کوٹہ میں کمی کرتے ہوئے حج کمیٹی کو زائد نشستیں الاٹ کی جائیں۔ صدرنشین حج کمیٹی نے کمیٹی کی میعاد تین سال سے بڑھاکر پانچ سال کرنے کی تجویز پیش کی ۔ اس موقع پر 10 زبانوں میں شائع کردہ حج گائیڈ کی رسم اجراء انجام دی گئی ۔ اسپیشل آفیسر آندھراپردیش حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے حیدرآبادی رباط میں قیام کے تنازعہ کی جلد یکسوئی کی خواہش کی۔ انہوں نے تجویز پیش کی کہ حجاج کرام کو واپسی پر سعودی ایر لائینس کی جانب سے زم زم سربراہ کیا جاتا ہے ۔ تاہم جاریہ سال سے حج کمیٹی کو اس کی ذمہ داری دی جائے گی ۔ انہوں نے عازمین حج کیلئے ایرپورٹ پر یوزر ڈیولپمنٹ چارجس کی وصولی ختم کرنے کی تجویز پیش کی ۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال ریاستی حکومت نے 50 فیصد رعایت دینے کا اعلان کیا تھا تاہم ابھی تک بجٹ جاری نہیں کیا گیا۔ انہوں نے خادم الحجاج کا انتخاب آن لائین کرنے کی بھی تجویز پیش کی۔ پروفیسر ایس شکور نے آندھراپردیش حج کمیٹی کے کوٹہ میں اضافہ کی خواہش کرتے ہوئے کہا کہ دو محفوظ زمروں کے تحت 1500 نشستیں پر ہوچکی ہیں لہذا عام زمرہ میں زیادہ عازمین کا انتخاب نہیں کیا جاسکا۔ انہوں نے 2011 ء مردم شماری کے حساب سے ریاستوں کو کوٹہ مقرر کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ رکن پارلیمنٹ ایم اے خان نے خانگی ٹور آپریٹر کے کوٹہ میں کمی کی تجویز پیش کرتے ہوئے کہا کہ خانگی آپریٹرس بھاری رقومات وصول کر رہے ہیں جبکہ حج کمیٹی سے رعایتی شرح پر حج کی سعادت حاصل کی جاسکتی ہے۔ انہوں نے یوزرس ڈیولپمنٹ چارجس سے عازمین حج کو مستثنیٰ کرنے کا مطالبہ کیا ۔ کانفرنس کے دوران بعض مندوبین نے حج کمیٹی کی جانب سے عمرہ کے انتظامات کی بھی تجویز پیش کی تاکہ کم خرچ میں مسلمان اس سعادت سے استفادہ کرسکیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT