Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / عاشور خانہ مقدمہ کی سماعت میں فریق ثانی کی سرکاری وکیل کے ساتھ بدتمیزی

عاشور خانہ مقدمہ کی سماعت میں فریق ثانی کی سرکاری وکیل کے ساتھ بدتمیزی

عدالت کی توہین پر مقدمہ درج کرنے جج کی ہدایت ، کرار حسین و دیگر کے خلاف ایف آئی آر درج
حیدرآباد۔/22ستمبر، ( سیاست نیوز) حیدرآباد ہائی کورٹ نے آج امام باڑہ یاقوت پورہ کے ایک عاشور خانہ کے مقدمہ کی سماعت کے دوران فریق ثانی کی جانب سے سرکاری وکیل کے ساتھ مبینہ بدتمیزی اور عدالت کی توہین پر چارمینار پولیس اسٹیشن میں مقدمہ درج کیا گیا۔ بتایا جاتا ہے کہ جسٹس سی وی ناگرجنا ریڈی کے اجلاس پر عاشور خانہ کی دیوار کی تعمیر کے سلسلہ میں وقف بورڈ کے چیف ایکزیکیٹو آفیسر منان فاروقی توہین عدالت کے معاملہ میں حاضر ہوئے تھے۔ وقف بورڈ کی نمائندگی اسپیشل گورنمنٹ پلیڈر شرت کمار کررہے تھے۔ بتایا جاتا ہے کہ عدالت کے باہر عاشور خانہ سے وابستہ افراد نے شرت کمار کے ساتھ بحث و تکرار کی اور بدتمیزی کی۔ انہوں نے چیف ایکزیکیٹو آفیسر کے ساتھ شرت کمار کی بات چیت کی تصاویر بھی لینے کی کوشش کی۔ اس مرحلہ پر شرت کمار نے عدالت میں داخل ہوکر جسٹس ناگرجنا ریڈی سے اس معاملہ کی شکایت کی جس پر انہوں نے پولیس اسٹیشن چارمینار میں شکایت درج کرنے کی ہدایت دی۔ بعد میں پولیس اسٹیشن میں کرار حسین اور دیگر دو افراد کے خلاف آئی پی سی کی دفعات 353 ، 188 اور 506 کے تحت مقدمات درج کئے گئے۔ پولیس نے کہا کہ وہ اس معاملہ کی جانچ کررہی ہے اور بہت جلد گرفتاری عمل میں لائی جائے گی۔ ہائی کورٹ کے جج کی ہدایت پر مقدمات درج کرنے کے معاملات بہت کم ہوتے ہیں اور عدالت کی جانب سے شکایت پر پولیس بروقت کارروائی کرتی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ عاشور خانہ کی دیوار کی تعمیر نہ کرنے پر چیف ایکزیکیٹو آفیسر وقف بورڈ کے خلاف توہین عدالت کا مقدمہ دائر کیا گیا۔ یہ مقدمہ سابق سی ای او اسد اللہ کے خلاف دائر کیا گیا تھا لیکن ان کے تبادلہ کے بعد سے موجودہ سی ای او منان فاروقی عدالت میں پیش ہورہے ہیں۔ عدالت نے اس مقدمہ کی آئندہ سماعت 13 اکٹوبر کو مقرر کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT