Saturday , December 15 2018

عالمی دھارے میں ہندوستان کی شمولیت کے لیے از سر نو انتظامی امور کی ترتیب ضروری

اڈمنسٹریٹیو اسٹاف کالج میں فاونڈیشن ڈے لکچر ، کے پدمنا بھیا کا خطاب

اڈمنسٹریٹیو اسٹاف کالج میں فاونڈیشن ڈے لکچر ، کے پدمنا بھیا کا خطاب
حیدرآباد /4 دسمبر (سیاست نیوز) ہندوستان کو عالمی دھارے میں شامل کرنے کیلئے انتظامی امور کو ازسرنو ترتیب دینے کی ضرورت ہے ۔ مسٹر کے پدمنابھیا سابق معتمد داخلہ نے آج ایڈمنسٹریٹیو اسٹاف کالج آف انڈیا کے فاؤنڈیشن ڈے لیکچر سے خطاب کے دوران یہ بات کہی ۔ انہوں نے بتایا کہ عوامی شعبہ جات کی حالت کو بہتر بنانے کیلئے ضروری ہے کہ شعبہ صحت تعلیم کے شعبہ جات کے حالات کو بہتر بنایا جائے جس سے سماجی ترقی و بہتری ممکن ہوسکتی ہے۔ اس موقع پر مسٹر ایس کے راؤ ڈائرکٹر جنرل ایڈمنسٹریٹیو اسٹاف کالج آف انڈیا کے علاوہ مسٹر ایس ایم دتہ صدرنشین کورٹ آف گورنرس موجود تھے۔ مسٹر کے پدمنابھیا نے بتایا کہ انتظامی امور میں بہتری اور عالمی معیار پیدا کرنے کیلئے یہ ضروری ہے کہ فیصلہ کرنے کی صلاحیتوں میں اضافہ ہو۔ انہوں نے بتایا کہ ملک کی بہتر صورت گیری کو یقینی بنانے کیلئے کم از کم قومی سطح کے پانچ نشانے مقرر کئے جانے چاہئے اور ان پانچ نشانوں کو مختلف شعبہ جات و محکمہ جات سے مربوط رکھتے ہوئے نشانوں کی عدم تکمیل کی صورت میں عہدیداروں کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے تاکہ نشانوں کے حصول میں ہونے والی بے وجہ تاخیر کو دور کیا جاسکے۔ انہوں نے بتایا کہ ہندوستان فی الحال انفارمیشن ٹکنالوجی ، ٹیلیکام اور خلاء کے میدانوں میں کافی مہارت کا اظہار کر رہا ہے لیکن اس کے باوجود ہندوستانی سرکاری تعلیمی اداروں کا معیار تعلیم بتدریج گھٹتا جارہا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ سائبر دنیا میں انسانی حقوق اور شہریوں کے مسائل کے حل کیلئے کئی وسائل موجود ہیں جن کے استعمال کے ذریعہ حالات کو بہتر بنایا جاسکتا ہے۔ مسٹر کے پدمنابھیا نے بتایا کہ ملک میں اسکیموں کے نام بدلتے ہوئے وہی منصوبے برسہا برس سے عوام کے سامنے پیش کئے جارہے ہیں جس کی کئی ایک مثالیں موجود ہیں۔ سابقہ منصوبوں کو نئے نام سے عوام کے سامنے پیش کرنا اس بات کا ثبوت ہے کہ سابق میں یہ اسکیم ناکام ہوئی ہے ۔ ناکامی کی وجوہات کا جائزہ لئے بغیر صرف نام بدلتے ہوئے عوام کو گمراہ کرنے کی پالیسی ترک کی جانی چاہئے ۔ انہوں نے بتایا کہ ملک کا ہر شعبہ اصلاحات کا مطالبہ کر رہا ہے اور عوام خود اصلاحات کی بات کر رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ تعلیم ، عدلیہ ، انتخابات ، خانگی ادارے ، سرکاری ادارے ، غرض یہ کہ ہر شعبہ میں اصلاحات درکار ہے لیکن خدمات کو بہتر بنانے کیلئے صرف اصلاحات ہی نہیں بلکہ عزم مصمم کی بھی ضرورت ہوتی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ آج وقت کی اہم ضرورت قومی سطح پر برقی پیداوار کو بہتر سے بہتر بنانا ہے۔ اسی طرح سیاحت کے علاوہ شہری ہوابازی کے فروغ کے ذریعہ ہندوستان کے حالات کو مزید بہتر بناتے ہوئے عالمی دوڑ میں شامل ممالک کے برابر لا کھڑا کیا جاسکتا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ملک کی قومی شاہراہوں کو بہتر بنانے اور تہذیب و ثقافت کے تحفظ کے ذریعہ بھی ہندوستان کی منفرد شناخت کو برقرار رکھا جاسکتا ہے۔ ابتداء میں ڈاکٹر ایس کے راؤ نے شرکاء کا خیرمقدم کیا ۔ بعد ازاں مسٹر ایس ایم دتہ نے ابتدائی کلمات ادا کئے۔

TOPPOPULARRECENT