Thursday , July 19 2018
Home / دنیا / عالمی سطح پر مستحقہ مقام کیلئے خونریز جنگ پر چین تیار

عالمی سطح پر مستحقہ مقام کیلئے خونریز جنگ پر چین تیار

کسی کی بھی ایک انچ اراضی نہیں چاہئے، مودی ۔ جن پنگ بات چیت

بیجنگ ۔ 20 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) قومی پیپلز کانگریس سے خطاب کرتے ہوئے صدر چین ژی جن پنگ نے اپنی 30 منٹ طویل تقریر میں کہا کہ چین کو کسی کی بھی سرزمین کی ایک انچ اراضی کی ضرورت نہیں ہے تاہم عالمی سطح پر مستحقہ مقام حاصل کرنے کیلئے چین خونریز جنگ کیلئے بھی تیار رہے گا۔ چینی قوم سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ چینی عوام اور چینی قوم ان کے اس پختہ عہد سے متفق ہیں۔ وہ قومی پیپلز کانگریس کے اختتامی اجلاس سے خطاب کررہے تھے حالانکہ انہوں نے سرزمین کے مسائل کا کوئی تذکرہ نہیں کیا اور نہ یہ کہا کہ پڑوسی ممالک سے کئی تنازعات میں چین ملوث ہے۔ ہر سال چین کے سالانہ پارلیمنٹ اجلاس کا افتتاح وزیراعظم چین کی پریس کانفرنس سے ہوتا ہے۔ اختتامی اجلاس سے صدر چین کا خطاب پہلا واقعہ ہے۔ ژی جن پنگ نے کہا کہ چین عالمی سطح پر مستحقہ مقام حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ وزیراعظم چین لی کیقیانگ نے روایتی سالانہ پریس کانفرنس سے خطاب کیا اور انہوں نے اس عہد کا اعادہ کیا کہ چین کسی بھی ملک کی ایک انچ اراضی پر قبضہ کرنے کا ارادہ نہیں رکھتا۔ چین پرامن ترقی پر یقین رکھتا ہے۔ انہوں نے پرزور انداز میں کہاکہ چین اپنے علاقہ میں توسیع نہیں چاہتا۔ ژی جن پنگ نے وزیراعظم ہندوستان نریندر مودی سے ٹیلیفون پر بات چیت کی اور 5 سالہ میعاد کیلئے دوبارہ منتخب کرنے پر مودی نے انہیں مبارکباد پیش کی۔ غالباً مودی اولین غیرملکی قائد ہیں جنہوں نے ژی جن پنگ سے دوبارہ 5 سالہ میعاد کیلئے صدر چین منتخب ہونے کے بعد ٹیلیفون پر بات کی ہے۔ دونوں قائدین نے سرکاری خبر رساں ادارہ ژنہوا کے بموجب ہندوستان اور چین قدیم تہذیبیں ہیں جو عالمی اثرورسوخ رکھتی ہیں۔ نریندر مودی نے کہاکہ ہندوستان چین کے ساتھ اعلیٰ سطحی تبادلوں میں اضافہ اور زیادہ گہرے، مستحکم تعلقات میں یقین رکھتا ہے اور چاہتا ہیکہ بین الاقوامی امور میں دونوں ممالک کی قریبی شراکت داری ہو تاکہ عالمی اور علاقائی امن اور ترقی ممکن ہوسکے۔ ژی جن پنگ نے مودی کی مبارکباد پر ان کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ چینی عوام عظیم کامیابی حاصل کرچکے ہیں۔ مودی نے کہا کہ ژی کے دوبارہ انتخاب سے ظاہر ہوتا ہیکہ انہیں پوری چینی قوم کی تائید حاصل ہے۔ ٹیلیفون پر بات چیت کے دوران دونوں قائدین نے اتفاق کیا کہ دونوں بڑی طاقتیں تیز رفتار ترقی کررہی ہیں۔ ہندوستان اور چین کا باہمی تعاون 21 ویں صدی کے خواب کی تعبیر حاصل کرے گا۔ یہ ایشیاء کی صدی ہوگی۔ اس سلسلہ میں نئی دہلی سے ایک سرکاری بیان جاری کیا جاچکا ہے ۔ دونوں قائدین نے قریبی باہمی مشاورت سے بھی اتفاق رائے کیا۔

TOPPOPULARRECENT