Sunday , November 19 2017
Home / ہندوستان / عام آدمی پارٹی کو عطیہ میں بے قاعدگیوں کی تحقیقات

عام آدمی پارٹی کو عطیہ میں بے قاعدگیوں کی تحقیقات

دہلی میں چار کمپنیوں کیخلاف جعلسازی، دھوکہ دہی، مجرمانہ سازش کا کیس درج ہونے پر پولیس سرگرم
نئی دہلی ، 21 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) دہلی پولیس چار کمپنیوں کے خلاف جعلسازی، دھوکہ بازی اور مجرمانہ سازش کے کیس کی تحقیقات کررہی ہے، جنھیں گزشتہ سال منعقدہ اسمبلی چناؤ کے دوران عام آدمی پارٹی کو اُن کے دیئے گئے عطیے کے سلسلے میں بے قاعدگیوں کے الزامات کا سامنا ہے۔ ایک پولیس عہدہ دار نے آج کہا کہ اے اے پی والنٹیرز ایکشن منچ (اے وی اے ایم) نامی ایک باغی گروپ نے گزشتہ سال ان چار کمپنیوں کے تعلق سے بے ضابطگیوں کے الزامات عائد کئے تھے اور دعویٰ کیا تھا کہ انھوں نے 2015ء الیکشن سے قبل عام آدمی پارٹی (اے اے پی) کو فی کس لگ بھگ 50 لاکھ روپئے بطور عطیہ دیئے تھے۔ عام آدمی پارٹی نے منچ کے عائد کردہ الزامات کو خارج کردیا ہے۔ پولیس عہدہ دار نے کہا کہ یہ منچ الیکشن کمیشن اور دہلی پولیس سے بھی رجوع ہوا لیکن اپنے دعوے کی تائید میں معقول ثبوت پیش کرنے میں ناکام رہا، جس کی وجہ سے تب کوئی کیس درج رجسٹر نہیں کیا گیا تھا۔ لیکن بعد میں وزارت کارپوریٹ اُمور کی جانب سے اس معاملے کی آزادانہ انکوائری ہوئی اور یہ معلوم ہوا کہ الزامات کا سامنا کرنے والی کمپنیوں سے متعلق کئی دستاویزات بشمول آڈٹ پیپرز جعلی ہیں۔ مذکورہ کمپنیوں کے دفاتر کا بھی دیئے گئے پتوں پر کوئی وجود نہیں اور آڈٹ پیپرز میں ایک چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ کی دستخط میں جعلسازی کا پتہ بھی چلا۔ چنانچہ وزارت کے ایک ریجنل ڈائریکٹر نے نومبر 2015ء میں دہلی پولیس کے شعبہ معاشی جرائم کے پاس ایک شکایت داخل کی اور انکوائری شروع کی گئی، جس کے بعد متعلقہ آئی پی سی دفعات کے تحت ایک کیس درج رجسٹر کیا گیا۔ عہدہ دار نے مزید کہا کہ تحقیقات جاری ہیں اور قانونی کارروائی ہوگی۔

TOPPOPULARRECENT