Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / عثمانیہ یونیورسٹی کے میس کی حالت زار ، دل بے چین اور آنکھیں نم

عثمانیہ یونیورسٹی کے میس کی حالت زار ، دل بے چین اور آنکھیں نم

اسمبلی میں موضوع بحث بنانے کا اعلان ، ڈاکٹر جے گیتا ریڈی کا بیان
حیدرآباد ۔ 18 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کی رکن اسمبلی سابق ریاستی وزیر ڈاکٹر جے گیتاریڈی نے کہا کہ عثمانیہ یونیورسٹی کے میس کی حالت دیکھ کر دل بے چین اور آنکھیں نم ہوگئیں ۔ اسمبلی میں عثمانیہ یونیورسٹی کی ابتر صورتحال اور طلبہ کے مسائل کو موضوع بحث بنانے کا اعلان کیا ۔ کانگریس ارکان اسمبلی ڈاکٹر جے گیتاریڈی ، کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی ، پدماوتی ، سمپت کمار ، جی چناریڈی اور دوسروں نے آج عثمانیہ یونیورسٹی پہونچکر یونیورسٹی کے مسائل اور طلبہ کے مسائل کا جائزہ لیا ۔ بعد ازاں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے گیتا ریڈی نے کہا کہ تلنگانہ کی تحریک میں عثمانیہ یونیورسٹی نے اہم رول ادا کیا ہے ۔ طلبہ نے اپنی زندگیاں ، تعلیم ، ملازمتوں کی قربانی دیتے ہوئے علحدہ تلنگانہ کی تحریک کو کامیاب بنانے میں اہم رول ادا کیا تاہم سونیا گاندھی کی جانب سے علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دینے کے بعد نئی ریاست میں پہلی حکومت تشکیل دینے والے چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے عثمانیہ یونیورسٹی اور طلبہ دونوں کو یکسر نظر انداز کردیا ہے ۔ یہی نہیں مسائل ، نا انصافی اور حق تلفی کے خلاف احتجاج کرنے والے طلبہ پر پولیس کے ذریعہ لاٹھی چارج کراتے ہوئے ان پر بیجا مقدمات درج کئے گئے ہیں وہ کانگریس کے وفد کے ساتھ آج عثمانیہ یونیورسٹی پہونچ کر میس کا معائنہ کرچکی ہیں اور دیگر سہولتوں کا بھی جائزہ لے چکی ہیں ۔ جسے دیکھ کر ان کا دل بے چین اور آنکھیں نم ہوگئی ہیں ۔ عالمی شہرت رکھنے والی عثمانیہ یونیورسٹی کی ابتر صورتحال اور طلبہ کو بنیادی سہولتیں دستیاب نہیں ہے ۔ نئے تعلیمی سال کے آغاز کے تین ماہ مکمل ہوچکے ہیں مگر ہنوز کئی میس بند پڑے ہیں طلبہ مسائل میں گھیرے ہوئے ہیں ان کا کوئی پرسان حال نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسمبلی اجلاس میں کانگریس پارٹی عثمانیہ یونیورسٹی اور طلبہ کے مسائل کو موضوع بحث بناتے ہوئے انہیں فوری حل کرنے کا ٹی آر ایس حکومت پر دباؤ بنائیں گے ۔ سابق ریاستی وزیر و کانگریس کے رکن اسمبلی مسٹر کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی نے کہا کہ تلنگانہ کے ہیڈکوارٹر حیدرآباد میں عثمانیہ یونیورسٹی کی یہ صورتحال ہے تو ریاست تلنگانہ کے دوسری یونیورسٹیز کی کیا صورتحال ہوگی یونیورسٹیز میں لکچرارس اور پروفیسرس کی کئی جائیدادیں مخلوعہ ہیں طلبہ سنگین صورتحال سے دوچار ہیں ۔ کانگریس پارٹی طلبہ کے مسائل پر اسمبلی اور کونسل میں حکومت کو جھنجوڑ کر ان مسائل کی عاجلانہ یکسوئی کے لیے جدوجہد کرے گی ۔۔

TOPPOPULARRECENT