Friday , June 22 2018
Home / شہر کی خبریں / عدالت سے رجوع ہونے میں حکومت کی مدد نہ کی جائے

عدالت سے رجوع ہونے میں حکومت کی مدد نہ کی جائے

حیدرآباد۔3فبروری ( این ایس ایس ) ڈپٹی چیف منسٹر سی دامودھر راج نرسمہا نے ریاست کی تقسیم کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع ہونے چیف منسٹر این کرن کمارریڈی کی کوششوں پر شدید تنقید کی ۔ انہوں نے چیف سکریٹری پی کے موہنتی کو موسومہ مکتوب میں خبردار کیا کہ اس ضمن میں حکومت کی طرف سے کسی بھی طرح کی مدد غیرقانونی اور غیردستوری ہوگی ۔ انہوں نے چیف سک

حیدرآباد۔3فبروری ( این ایس ایس ) ڈپٹی چیف منسٹر سی دامودھر راج نرسمہا نے ریاست کی تقسیم کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع ہونے چیف منسٹر این کرن کمارریڈی کی کوششوں پر شدید تنقید کی ۔ انہوں نے چیف سکریٹری پی کے موہنتی کو موسومہ مکتوب میں خبردار کیا کہ اس ضمن میں حکومت کی طرف سے کسی بھی طرح کی مدد غیرقانونی اور غیردستوری ہوگی ۔ انہوں نے چیف سکریٹری کو سپریم کورٹ میں مقدمہ درج کرنے سے باز رہنے کی ہدایت دی اور کہا کہ اس سے مرکز ۔ ریاست تنازعہ کھڑا ہوجائے گا ۔ ریاستی حکومت ایسا اُس وقت کرسکتی ہے جب کابینہ اس کی اجازت دے ۔ چیف منسٹر کابینہ کی منظوری کے بغیر عدالت سے رجوع نہیں ہوسکتے ۔

انہوں نے کہا کہ اگر ایسا ہو تو ریاستی حکومت پر کوئی ذمہ داری عائد نہیں ہوگی کیونکہ تلنگانہ قائدین تقسیم کے حق میں ہیں۔ دامودھر راج نرسمہا نے کہا کہ مرکز نے تلنگانہ ریاست کی تشکیل کا فیصلہ کرلیا ہے اور اس فیصلہ کی مخالفت خود غیر قانونی حرکت ہے ۔ ایسے میں حکومت کی طرف سے عدالت سے رجوع ہونے کے لئے مدد نہیں کی جانی چاہیئے ۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست کی تقسیم مرکز کا دائرہ اختیار ہے اور ریاستی حکومت اس پر سوال نہیں اُٹھا سکتی ۔ مرکز دفعہ 3کے تحت کسی بھی ریاست کو تقسیم کرسکتاہے اور اسمبلی و ریاستی حکومت کا اس میں کوئی رول نہیں ۔ چنانچہ ریاستی حکومت عدالت سے رجوع نہیں ہوسکتی اور چیف منسٹر یکطرفہ طور پر کوئی فیصلہ نہیں کرسکتے ۔

TOPPOPULARRECENT