Thursday , September 20 2018
Home / عرب دنیا / عراق میں عسکری لیڈر کے ویڈیو کی توثیق کیلئے کوششیں

عراق میں عسکری لیڈر کے ویڈیو کی توثیق کیلئے کوششیں

خصوصی ماہرین جائزہ لینے میں مصروف : وزیر اعظم کے سکیوریٹی ترجمان قاسم عطا کا بیان

خصوصی ماہرین جائزہ لینے میں مصروف : وزیر اعظم کے سکیوریٹی ترجمان قاسم عطا کا بیان
بغداد 6 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) عراقی افواج کی جانب سے ایک آن لائین ویڈیو کا جائزہ لیا جا رہا ہے ۔ اس ویڈیو میں عراق کے عسکری گروپ کے لیڈر کو تخریب کاروں کے کنٹرول والے شہر موصل میں ایک خطبہ دیتے ہوئے دکھایا گیا ہے ۔ ایک فوجی ترجمان نے یہ بات بتائی ۔ اگر یہ ویڈیو حقیقی پایا گیا تو یہ مملکت اسلامی قرار دئے جانے والے اس گروپ کا پہلا ویڈیو ہوگا اور اس کے لیڈر پہلی مرتبہ کیمرہ پر پیش ہوئے ہیں۔ وہ خود کو مسلم دنیا کے لیڈر قرار دیتے ہیں۔ کہا گیا ہے کہ یہ خطاب انہوں نے شمالی عراقی شہر موصل کی مسجد النور میں نماز جمعہ کے موقع پر کیا تھا ۔ وزیر اعظم نوری المالکی کے سکیوریٹی ترجمان لیفٹننٹ جنرل قاسم عطا نے کہا کہ اس ویڈیو کی تحقیقات کی جا رہی ہیں اس کا جائزہ لیا جارہا ہے

اور سکیوریٹی فورسیس اور انٹلی جنس عہدیدار اس کی توثیق کی کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس اس سب کا خصوصی جائزہ لینے والے خصوصی ماہرین ہیں۔ یہ ویڈیو کل ایک ویب سائیٹ پر پیش کیا گیا تھا جس میں ایک شخص ایک سیاہ جبے اور پگڑی میں ملبوس گہری داڑھی کے ساتھ وسطی موصل کی مسجد میں خطاب کر رہا تھا ۔ یہ ادعا کیا جارہا ہے کہ یہ شخص عسکری گروپ کا سربراہ ابو بکر البغدادی ہے ۔ اس شخص کو خلیفہ ابراہیم قرار دیا جارہا ہے جبکہ اس گروپ نے 29 جون کو اسلامی خلافت کے قیام کا اعلان کیا تھا ۔ عسکریت پسندوں کی قیادت والے گروپس نے 10 جون کو موصل پر حملے کرتے ہوئے قبضہ کرلیا تھا اور اس کے بعد انہوں نے بغداد کے شمالی اور جنوبی پانچ صوبوں میں وسیع علاقوں کو اپنے کنٹرول میں لے لیا ہے اور یہاں ہزاروں افراد بے گھر ہوگئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT