Thursday , December 14 2017
Home / ہندوستان / عراق میں لاپتہ 39 شہریوں کے ارکان خاندان غم سے بے حال

عراق میں لاپتہ 39 شہریوں کے ارکان خاندان غم سے بے حال

وزیر خارجہ ابراہیم الجعفری کے بیان نے مایوس کردیا، حکومت ہند کا غیر واضح موقف : متاثرین
چندی گڑھ۔24 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان کے 39 شہریوں کا تقریباً تین سال قبل عراق کے شہر موصل میں اغوا کیا گیا تھا اور آج ان کے ارکان خاندان میں اس وقت غم و اندوہ کی لہر دوڑ گئی جب دورہ کنندہ وزیر خارجہ عراق ابراہیم الجعفری نے کہا کہ ان کے پاس اس بات کا کوئی ٹھوس ثبوت نہیں کہ یہ تمام اب تک زندہ ہیں یا ہلاک ہوگئے۔ (خبر صفحہ 5 پر) وزیر خارجہ نے کہا کہ ان 39 ہندوستانی شہریوں کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کی ممکنہ کوشش کی جارہی ہے۔ ان شہریوں کے عزیز و اقارب کو توقع تھی کہ ابراہیم الجعفری کی ہندوستان آمد پر انہیں کچھ نہ کچھ حوصلہ افزاء اطلاع ملے گی لیکن انہوں نے آج دیئے گئے بیان کے ذریعہ سب کو مایوس کردیا۔ دیویندر نامی شخص نے بتایا کہ ان کے بھائی گوبندر ان 39 افراد میں شامل ہیں جن کا اغوا کیا گیا۔ انہیں آج وزیر خارجہ عراق کا یہ بیان سن کر انتہائی صدمہ پہنچا کہ لاپتہ افراد کے زندہ یا مردہ ہونے کے بارے میں انہیں کوئی اطلاع نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ارکان خاندان کافی پریشان ہیں۔ ہم کھانا نہیں کھا پارہے ہیں۔ ایک اور لاپتہ شخص کے رکن خاندان نے کہا کہ وزیر خارجہ عراق کے بیان سے یہ ظاہر ہوگیا کہ حکومت ہند کو لاپتہ افراد کے بارے میں ٹھوس اطلاع نہیں ہے۔ امرتسر کے ساکن 30 سالہ شراون کے بھائی نشان بھی عراق میں لاپتہ ہوگئے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے 8 جون کو کہا تھا کہ تمام ہندوستانی شہری عراق میں ایک چرچ میں موجود ہیں۔ اس کے بعد 16 جولائی کو وزیر خارجہ سشما سوراج سے ملاقات کے دوران کہا گیا کہ شمال مغربی موصل کی ایک جیل میں وہ موجود ہوسکتے ہیں۔ حالیہ میڈیا اطلاعات کے مطابق یہ جیل اب ختم ہوچکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو لاپتہ شہریوں کے بارے میں واضح موقف اختیار کرنا چاہئے۔ ایک اور شخص گرپندر کور جن کے بھائی منجندر سنگھ لاپتہ ہیں کہا کہ ہم کافی فکرمند ہیں اور ہم مرکزی وزیر کا کل بیان سننے کے بعد آئندہ کے لائحہ عمل کے بارے میں فیصلہ کریں گے۔ ان 39 ہندوستانی شہریوں میں 22 کا تعلق پنجاب کے مختلف شہروں سے بتایا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT