Wednesday , June 20 2018
Home / دنیا / علاقائی افواج سے بوکوحرم کی جھڑپ، 200 افراد ہلاک

علاقائی افواج سے بوکوحرم کی جھڑپ، 200 افراد ہلاک

گامبورو۔ 4 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) حکومت چاڈ نے کہاکہ نائجیریا کی تنظیم بوکوحرم کو زبردست نقصان پہنچایا گیا ہے۔ سرحدی قصبہ میں اسلام پسند تنظیم کے ’’200 سے زیادہ‘‘ عسکریت پسند ہلاک ہوگئے۔ یہ قصبہ جارحانہ کارروائی میں باغیوں سے چھین لیا گیا۔ چاڈ کے 9 فوجی بھی ہلاک اور دیگر 21 زخمی ہوگئے جبکہ علاقائی فوجوں کی شورش پسندوں سے نائجیریا کی

گامبورو۔ 4 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) حکومت چاڈ نے کہاکہ نائجیریا کی تنظیم بوکوحرم کو زبردست نقصان پہنچایا گیا ہے۔ سرحدی قصبہ میں اسلام پسند تنظیم کے ’’200 سے زیادہ‘‘ عسکریت پسند ہلاک ہوگئے۔ یہ قصبہ جارحانہ کارروائی میں باغیوں سے چھین لیا گیا۔ چاڈ کے 9 فوجی بھی ہلاک اور دیگر 21 زخمی ہوگئے جبکہ علاقائی فوجوں کی شورش پسندوں سے نائجیریا کی سرزمین پر پہلی بار جھڑپ ہوئی۔ چاڈ کی فوج کے بموجب ہلاکتوں کی ایک تعداد عبوری نوعیت کی ہے۔ فوجی اب بھی نائجیریا کی سرحد پر جو کیمرون سے ملتی ہے، مفرور باغیوں کی تلاش میں ہیں۔ تقریباً 2000 چاڈ کے فوجی بکتربند گاڑیوں کے ساتھ سرحد پار کرکے قصبہ گامبورو میں داخل ہوگئے تھے۔ گذشتہ ہفتہ افریقی یونین نے علاقائی فوج کی حوصلہ افزائی کی تھی کہ وہ انتہاء پسندوں کا مقابلہ کرے۔ خودکار فائرنگ کی آوازیں قصبہ میں آج بھی سنی گئیں۔ اس قصبہ کا مقامی شہریوں نے محاصرہ کر رکھا ہے جبکہ چاڈ نے اپنی جارحانہ کارروائی کے دوران اس علاقہ پر فضائی حملے کئے ہیں۔ گامبورو میں فوجی کارروائی جاری ہے۔ قصبہ فوٹوکول سرحد کے دوسری جانب واقع ہے اور کیمرون میں ہے۔ اس پر بھی جہادیوں نے تازہ حملہ کیا تھا۔

بوکوحرم کے نیم فوجی جنگجو آج صبح یہاں داخل ہوگئے اور فوٹوکول کے فوجیوں سے ان کی جھڑپ شدید تھی۔ کیمرون کے ایک صیانتی ذریعہ کے بموجب کیمرون کے فوجیوں نے صبح کے وقت باغیوں کا حملہ پسپا کردیا تھا۔ کینیڈا کے فوجی نائجیریا سے سرحد پار کرکے قصبہ کے دفاع کیلئے پہنچ گئے تھے۔ گامبورو میں جھڑپوں کے مقام پرزبردست خونریزی ہوئی۔ میدان میں ہر طرف نعشیں بکھری ہوئی تھی۔ مکان تباہ کردیئے گئے۔ دکانوں کو نذرآتش کردیا گیا اور لاریاں جل کر خاکستر ہوگئیں۔ چاڈ کی فوج کے کمانڈر احمت دری نے کہا کہ دہشت گردوں کے گروہ کو جڑ سے اکھاڑ کر پھینک دیا گیا۔ نائجیریا کی فوج پر شورش پسندوں کو پسپا کرنے میں ناکامی پر سخت تنقید کی جارہی تھی جبکہ 14 فبروری کو صدارتی اور پارلیمانی انتخابات مقرر ہیں۔ حالیہ مہینوں میں اس گروپ نے سرحد پار دھاوؤں میں اضافہ کردیا ہے اور علاقائی سلامتی کیلئے خطرہ بن گئے ہیں۔ چاڈ کی مداخلت سے نائجیریا کے پڑوسی ممالک کی بوکوحرم کے ان کی سرحدوں پر خلافت اسلامیہ قائم کرنے کے امکانات کی وجہ سے تشویش پھیل گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT