Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / علاقہ تلنگانہ میں کانگریس، ٹی آر ایس کے درمیان کانٹے کی ٹکر

علاقہ تلنگانہ میں کانگریس، ٹی آر ایس کے درمیان کانٹے کی ٹکر

تلگودیشم کا بھی بہترین مظاہرہ، ملے جلے نتائج سے پارٹیوں میں تجسس

تلگودیشم کا بھی بہترین مظاہرہ، ملے جلے نتائج سے پارٹیوں میں تجسس

حیدرآباد /13 مئی (سیاست نیوز) علاقہ تلنگانہ میں کانگریس اور ٹی آر ایس کے درمیان کانٹے کی ٹکر ہے۔ صبح سے ہی نتائج کبھی ٹی آر ایس کے حق میں تھے تو کبھی کانگریس کو سبقت حاصل ہو رہی تھی، جس سے دونوں جماعتوں کے قائدین الجھن کا شکار ہیں، جب کہ تلگودیشم بہتر مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی موجودگی کا احساس دلانے میں کامیاب ہوئی ہے۔ بلدی انتخابات میں علاقہ تلنگانہ میں کانگریس نے شاندار کامیابی درج کراتے ہوئے ٹی آر ایس کو مایوس کردیا تھا، تاہم آج جیسے ہی ایم پی ٹی سی اور زیڈ پی ٹی سی کے نتائج کا آغاز ہوا تو ابتدائی رجحان ٹی آر ایس کے حق میں تھا، جس کی وجہ سے کانگریس میں مایوسی پائی جا رہی تھی۔ دونوں جماعتوں کے لئے یہ نتائج آنکھ مچولی ثابت ہو رہے تھے، کیونکہ ابتدا سے کامیاب رہنے والی ٹی آر ایس دوپہر ہوتے ہوتے پیچھے ہو گئی اور کانگریس کو سبقت حاصل ہو گئی۔ چار اضلاع میں ٹی آر ایس کی لہر دیکھی گئی، جب کہ پانچ اضلاع میں کانگریس نے سبقت حاصل کی۔ صبح میں ایم پی ٹی سی کی دوڑ میں ٹی آر ایس آگے رہی اور زیڈ پی ٹی سی نتائج کے ابتدائی رجحان بھی ٹی آر ایس کے حق میں رہے، تاہم دوپہر میں اطمینان کا سانس لینے والی کانگریس کو زیڈ پی ٹی سی کے نتائج نے حیرت زدہ کردیا۔ اس طرح صبح سے شام تک کانگریس اور ٹی آر ایس کے حلقوں میں کبھی خوشی اور کبھی غم دیکھنے کو ملے۔ واضح رہے کہ شام 6 بجے تک نظام آباد ضلع پریشد پر ٹی آر ایس کا قبضہ ہو گیا، جب کہ ضلع کھمم میں تلگودیشم نے چونکا دینے والا مظاہرہ کیا۔ شام 6 بجے تک ایم پی ٹی سی کی 901 نشستوں پر کانگریس، 833 نشستوں پر ٹی آر ایس،306 پر تلگودیشم اور 77 نشستوں پر بی جے پی نے کامیابی حاصل کی تھی، تاہم اب تک کسی بھی جماعت کے قائد نے نتائج اپنی پارٹی کے حق میں ہونے کا ادعا نہیں کیا۔

TOPPOPULARRECENT