Thursday , June 21 2018
Home / اضلاع کی خبریں / علاقہ حیدرآباد کرناٹک سے سوتیلا سلوک

علاقہ حیدرآباد کرناٹک سے سوتیلا سلوک

این ڈی اے حکومت پر ملیکارجن کھرگے کی سخت تنقید

این ڈی اے حکومت پر ملیکارجن کھرگے کی سخت تنقید
کلبرگی14جون :(سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)سابق مرکزی وزیر اور رکن پارلیمان و اپوزیشن لیڈر مسٹر ایم ملیکارجن کھرگے نے آج مرکزی وزارت کی جانب سے گلبرگہ کے ای ایس آئی اسپتال کو کسی قسم کا کوئی تعاون نہ دیے جانے کو عمداً کی جانے والی حرکت سے تعبیر کرتے ہوئے اس علاقے کے ساتھ سوتیلا سلوک قرار دیا اور کہا ہے کہ این ڈی اے کی مودی حکومت نے علاقہ حیدرآبادکرناٹک کے عوام کو یکا و تنہا چھوڑ دیا ہے۔اس کامپلکس کو جب مرکز میں یو پی اے کی حکومت تھی اور مسٹر کھرگے مرکزی وزیر محنت تھے تب گلبرگہ میں لانچ کیا گیا تھا اور اس شاندار عمارت جس کی ملک بھر میں نظیر نہیںملتی میں ایک میڈیکل کالج ،اور تمام تر جدید سہولتوں سے لیس ایک اسپتال بھی شامل ہے۔مسٹر کھرگے نے الزام عائد کیا کہ این ڈی اے حکومت نے ان کی اپیل پر کان نہیں دھرے جس میں انھوں نے اپیل کی تھی کہ اس ہاسپٹل کے لیے مرکز مزید فنڈز جاری کرے۔ملک میں ای ایس آئیز کے لیے 42000کروڑ روپیے کا فنڈ موجود ہے اور مرکز کو چاہیے کہ وہ اپنی ایک ایسی عمارت جسے پسماندہ علاقے میں تعمیر کیا گیا ہے کی قدر کرتے ہوئے اس کو مزید فنڈز جاری کرتی الٹا اس عمارت کو ریاستی حکومت کو سونپنے پر تلی ہوئی ہے۔قدوائی کینسر ہاسپٹل کے اندر نئے ایکسیلیٹر خدمات کا افتتاح انجام دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ میں نے مسٹر مودی کو تین مکاتیب تحریر کیے اور اس میں ان سے اپیل کی تھی کہ وہ ای ایس آئی کے سلسلے میں مرکز کی سابقہ یو پی اے کی ،پالیسیوں کو جاری رکھیں مگر ان میں سے کسی ایک کا بھی جواب مجھے موصول نہ ہوسکا اور نہ ہی مرکز نے میری اپیل کو در خو اعتنا سمجھا۔مسٹر کھرگے نے کہا کہ کرناتک ریاست نے ای ایس آئی ورکرس کی فلاح و بہبود کے لیے اس اسپتال کے حوالے سے 1200کروڑ روپیے خرچ کیے تھے مگر مرکز نے اسے صرف 250 تا300کروڑ ہی لوٹائے ہیں۔انھوںنے کہا کہ ای ایس آئی میں فنڈس کی کوئی کمی نہیں ہے اور یہ فنڈ مرکزی حکومت کو چاہیے کہ وہ مزدوروں اور ان کے بچوں کی فلاح میں خرچ کرے۔

TOPPOPULARRECENT